بچوں میں کووڈ 19 کی طویل المعیاد علامات کا خطرہ بہت کم ہوتا ہے، تحقیق

جو بچے کورونا وائرس سے متاثر ہوتے ہیں ان میں طویل المعیاد بنیادوں پر علامات کا امکان بہت کم ہوتا ہے۔

یہ بات برطانیہ میں ہونے والی ایک نئی طبی تحقیق میں سامنے آئی۔

کووڈ کی طویل المعیاد علامات کا سامنا کرنے والے افراد کے لیے لانگ کووڈ کی اصطلاح استعمال کی جاتی ہے اور حالیہ تحقیقی رپورٹس سے عندیہ ملا ہے کہ اس سے متاثر بالغ افراد کی شرح کافی زیادہ ہوسکتی ہے۔

مگر کنگز کالج لندن کی اس تحقیق میں بتایا گیا کہ بچوں میں لانگ کووڈ کی شرح بہت کم ہوتی ہے۔

اس تحقیق میں 5 سے 17 سال کی عمر کے 1734 بچوں کو شامل کیا گیا تھا جن میں ستمبر 2020 سے فروری 2021 کے دوران کووڈ 19 کی تشخیص ہوئی تھی۔

ان مریضوں کا ڈیٹا یو کے زوئی کووڈ 19 اسٹڈی ایپ سے حاصل کیا گیا تھا۔

محققین نے بتایا کہ یہ جاننا بہت مشکل ہے کہ اس عرصے میں کتنے بچے کووڈ 19 سے متاثر ہوئے کیونکہ برطانیہ کے 4 ممالک میں ڈیٹا کو جمع کرنے کا طریقہ کار مختلف ہے، مگر ایک تخمینے کے مطابق 4 لاکھ سے زیادہ بچے اور نوجوانوں میں کووڈ کی تشخیص ہوئی۔

تحقیق کے مطابق ہر 20 میں سے ایک (4 فیصد) کو 4 ہفتوں یا اس سے زائد عرصے تک علامات کا سامنا ہوا جبکہ ہر 50 میں سے صرف ایک (2 فیصد) میں علامات کا دورانیہ 8 ہفتوں سے زیادہ تھا۔

جن بچوں کو لانگ کووڈ کا سامنا ہوا ان کی جانبب سے سردرد اور تھکاوٹ کو عام ترین علامات کے طور پر رپورٹ کیا گیا جبکہ کچھ کو گلے کی سوجن اور سونگھنے کی حس سے محرومی کا سامنا ہوا۔

تحقیق میں بتایا کہ اوسطاً زیادہ عمر کے بچوں میں بیماری کا دورانیہ پرائمری اسکول جانے والے بچوں کے مقابلے میں کچھ طویل ہوتا ہے۔

12 سے 17 سال کی عمر کے بچے ایک ہفتے میں بیماری سے صحتیاب ہو جاتے ہیں جبکہ اس سے کم عمر بچوں میں بیماری کا دورانیہ 5 دن تک ہوتا ہے۔

محققین نے بتایا کہ نتائج کا پیغام یہ ہے کہ بچے بھی کووڈ کو شکست دینے کے بعد طویل المعیاد علامات کا سامنا کرسکتے ہیں، مگر یہ زیادہ عام نہیں ہوتا اور بیشتر بچے وقت کے ساتھ بہتر ہوجاتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بچوں میں دیگر بیماریوں سے بھھی طویل المعیاد علامات کا امکان ہوتا ہے، تو ہمیں یہ دیکھنے کی بھی ضرورت ہے کہ بچوں میں یہ علامات کووڈ 19 کی ہیں یا کسی اور بیماری کی۔

اس تحقیق کے نتائج طبی جریدے لانسیٹ چائلڈ اینڈ اڈولسینٹ ہیلتھ جرنل میں شائع ہوئے۔

Close