منی لانڈرنگ کیس، حمزہ شہباز کے ریمانڈ میں مزید 10 روز کی توسیع

منی لانڈرنگ کیس میں عدالت نے نیب کی استدعا پر حمزہ شہبازکے ریمانڈ میں مزید 10 روز کی توسیع کر دی ہے۔عدالت نے حمزہ شہباز کے خلاف مقدمے کی سماعت کی۔ مقدمے کی سماعت کے دوران نیب کے وکیل حافظ اسد اللہ اعوان نے دلیل دی کہ حمزہ شہباز کے اثاثے 2005 میں 20 ملین ڈالر سے بڑھ کر 45 ملین ڈالر ہو گئے تھے۔تفتیش کے دوران دو بے نامی کمپنیوں کی نشاندہی کی گئی جن کا نام نثار احمد ، علی احمد خان اور ندیم تھا۔ محمد طاہر کا نام حمزہ کے عملے کے نام پر رکھا گیا۔ نیب کے وکیل حافظ اسد اللہ اعوان نے 5 ارب ڈالر مالیت کی ایک بے نامی کمپنی کے حوالے سے مزید تفتیش کے لیے حمزہ شہباز کو 15 دن کی حراست میں رکھنے کی درخواست کی ہے۔

حمزہ شہباز کے وکیل نے مقدمے سے قبل گرفتاری کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ تمام فائلیں نیب کے حوالے کر دی گئی ہیں۔ دونوں فریقوں کے دلائل کے بعد عدالت نے حمزہ شہباز کے ریمانڈ کو مزید دس دن تک بڑھا دیا اور 3 اگست تک ان کی منتقلی کا حکم دیا۔

دریں اثنا حمزہ شہباز نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم نے جھوٹ بولنے میں بڑی غلطی کی ہے۔ مخالفین بھی احتجاج کریں گے ، لوگ تیار ہیں۔ اس حکومت نے غریبوں کو ایک اور بحران میں ڈال دیا ہے ، لوگ اب حکومت کے لیے بدعائیں کر رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ احتجاج کسی بھی سیاسی جماعت کا حق ہے ، حکومتی انتقامی نظام میں لوگ احتجاج کرنے نکلیں گے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button