جنسی ہراسانی کا الزام: شہزادہ اینڈریو سے فوجی عہدے واپس

برطانوی ڈیوک آف یارک شہزادہ اینڈریو کے خلاف امریکہ میں زیر سماعت جنسی ہراسانی کے الزامات کے کیس میں پیشرفت کے بعد ان سے فوجی عہدے واپس لے لیے گئے ہیں جس پر برطانوی فوجیوں نے خوشی کا اظہار کیا ہے۔ اب ڈیوک آف یارک اپنے خلاف درج کیس کا ایک پرائیویٹ شہری کے طور پر دفاع کریں گے۔

یہ پیشرفت ایک امریکی جج کی جانب سے ملکہ برطانیہ الزبتھ دوم کے بیٹے شہزادہ اینڈریو کے خلاف جنسی استحصال کے کیس کی سماعت کی اجازت دینے کے بعد ہوئی ہے۔ چنانچہ ملکہ نے فوری طور پر شہزادے سے ان کے اعزازی فوجی عہدے اور شاہی سرپرستی واپس لے لی ہے۔ بکنگھم محل نے اعلان کیا ہے کہ ڈیوک آف یارک پرنس اینڈریو اب اس کیس میں اپنا دفاع ایک عام شہری کے طور پر کریں گے اور انہیں اب ہز رائل ہائنس کہہ کر مخاطب نہیں کیا جائے گا۔ برطانوی شاہی محل سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ماد ملکہ کی اجازت اور رضامندی سے ڈیوک آف یارک کے فوجی عہدے واپس لے لیے گے ہیں۔ ڈیوک آف یارک کسی عوامی فرائض کی انجام دہی میں حصہ نہیں لیں گے اور اس کیس کا نجی شہری کے طور پر دفاع کریں گے۔‘

یاد رہے کہ شہزادہ اینڈریو برطانوی فوج کے سب سے پرانے دستے گرینڈیئر گارڈز کے کرنل ہیں، ان سے واپس لیے جانے والے عہدے اب شاہی خاندان کے دیگر اراکین کو دے دیے جائیں گے، جن کا اعلان ابھی ہونا باقی ہیں۔

بتایا گیا یے کہ ڈیوک آف یارک اینڈریو کے بارے میں یہ برا فیصلہ ونڈسر خاندان میں بحث و مباحثے کے بعد لیا گیا، جس کا مقصد شاہی خاندان کو متنازع ہونے سے بچانا ہے۔ اینڈریو کے پاس موجود دیگر فوجی اعزازات میں رائل ایئر فورس لوسی ماؤتھ کے اعزازی ایئر کوموڈور، رائل آئرش رجمنٹ کے کرنل اِن چیف، سمال آرمز سکول کور کے کرنل اِن چیف، فلیٹ ایئر آرم کے کوموڈور اِن چیف، رائل ہائی لینڈ فیوزیلیئرز کے رائل کرنل، ملکہ برطانیہ کی رائل لانسز کے نائب کرنل اِن چیف اور سکاٹ لینڈ کی رائل رجمنٹ کے رائل کرنل شامل تھے۔

شاہ سعود کی بیٹی شہزادی بسمہ کی 3 برس بعد قید سے رہائی

یاد رہے کہ امریکی ریاست ورجنیا کی رہائشی جوفرے نامی خاتون نے امریکہ میں شہزادہ اینڈریو پر کیس دائر کر رکھا ہے، جس میں الزام لگایا گیا ہے کہ اینڈریو نے ان پر تب جنسی حملہ کیا جب وہ ٹین ایجر تھیں۔ ان کا کہنا ہے کہ وہ 17 سال کی تھیں اور امریکی قانون کے مطابق نا بالغ تھیں جب انہیں سزا یافتہ مجرم جیفری ایپسٹین نے اینڈریو کے ساتھ جنسی عمل کے لیے سمگل کیا۔ دوسری جانب اینڈریو ان الزامات کی تردید کرتے ہیں۔

امریکی جج کی جانب سے انکے خلاف کیس کی سماعت کی اجازت دینے کا مطلب ہے کہ اگر دونوں فریقین میں تصفیہ نہیں ہوتا تو اینڈریو کو امریکہ میں جاری مقدمے میں بیان دینے کے لیے پیش ہونا پڑے گا، جو ستمبر 2022 میں شروع ہو سکتا ہے۔جوفرے کی اینڈریو اور ان کی دوست گزلین میکسویل کے ساتھ تصاویر موجود ہیں، جو تب لی گئیں جب اینڈریو اور جوفرے کے جنسی تعلقات قائم ہوئے۔ میکسویل کو گذشتہ ماہ ان الزمات میں مجرم پایا گیا، جوفرے کے وکیل کا کہنا ہے کہ وہ اینڈریو کے ساتھ ’محض مالی تصفیے‘ میں دلچسپی نہیں رکھتیں، جس سے لگتا ہے کہ انہیں اپنا نام کلیئر کرنے کے لیے ایک لمبی اور شرمندگی کا باعث بننے والی قانونی کارروائی سے گزرنا پڑے گا۔

Related Articles

Back to top button