حکومت کا نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کا فیصلہ

وفاقی حکومت نے علاج کی خاطر سابق وزیراعظم میاں نواز شریف کو بیرون ملک جانے کی اجازت دینے کا فیصلہ کیا ہے جس کے بعد ان کا نام ای سی ایل سے ہٹایا جا رہا ہے۔
اس سے پہلے وفاقی وزیرداخلہ بریگیڈیر ریٹائرڈ اعجاز شاہ نے یہ دعوی کیا تھا کہ میاں نواز شریف کا نام ای سی ایل پر موجود نہیں ہے اور وہ جب چاہے باہر جا سکتے ہیں۔ تاہم آج ان کے اس دعوے کی تردید ہوگئی ہے ۔ وزیراعظم عمران خان کی منظوری سے وزارت داخلہ نے ای سی ایل سے نواز شریف کا نام ہٹانے کی باقاعدہ ہدایات دیدی ہیں اور امکان یہ ہے کہ ان کا نام اگلے 24 گھنٹے میں ای سی ایل سے ہٹا دیا جائے گا جس کے بعد نواز شریف اگلے ہفتے علاج کے لیے لندن روانہ ہوسکتے ہیں۔
اس سے قبل نواز شریف کے بھائی، مسلم لیگ نون کے صدر میاں شہباز شریف نے ای سی ایل سے نواز شریف کا نام نکالنے کے لیے وزارتِ داخلہ میں درخواست جمع کرائی تھی۔ نواز شریف کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ سے نکلوانے کے لیے سیکریٹری وزارت داخلہ کو درخواست جمع کرائی گئی تھی۔ درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ بیرون ملک علاج کیلئے نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالا جائے۔ درخواست میں صرف بیرون ملک کا ذکر کیا گیا ہے، کسی ملک کا نام نہیں لکھا گیا کہ علاج کیلئے کس ملک میں جانا چاہتے ہیں۔ درخواست میں نواز شریف کا نام ای سی ایل سے خارج کرنے کی استدعا کی گئی تھی جبکہ درخواست کے ساتھ نواز شریف کی میڈیکل رپورٹس اور میڈیکل ہسٹری بھی لگائی گئی تھی.
ذرائع کے مطابق شہباز شریف نے نواز شریف کی تیمار داری کے لیے ذاتی اور سیاسی مصروفیت ترک کر دی ہیں، جبکہ نواز شریف کو ان کے اہلِ خانہ نے راضی کیا ہے کہ وہ بیرونِ ملک علاج کے لیے جائیں، ان کے ہمراہ شہباز شریف بھی بیرونِ ملک جا سکتے ہیں۔
واضح رہے کہ رواں برس اگست میں وفاقی کابینہ کے اجلاس کی روشنی میں وزارت داخلہ نے سابق وزیراعظم نواز شریف اور ان کی صاحب زادی مریم نواز کا نام ای سی ایل میں شامل کیا تھا. دوسری جانب وزیراعظم کے معاون خصوصی نعیم الحق کا کہنا ہے کہ حکومت نے سابق وزیراعظم نواز شریف کا ای سی ایل سے نکالنے کا فیصلہ کرلیا ہے ‘حکومت نوازشریف کی راہ میں کوئی رکاوٹ نہیں ڈالے گی. نعیم الحق نے کہا کہ حکومت کا شروع سے موقف رہا ہے کہ نواز شریف کو باہر جاکر علاج کرانا چاہیے‘ ہم ان کی راہ میں کوئی رکاوٹ نہیں ڈالیں گے، عدالت کا نوازشریف کے معاملے پر جو فیصلہ ہوگا حکومت قبول کرے گی۔ شاہ نے کہا کہ میں نواز شریف کا ہم عمر ہوں ،خود بھی علیل اورہسپتال میں زیر علاج ہوں نوازشریف جلدی سے باہر جائیں علاج کرائیں اور واپس آئیں.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close