ڈینگی مچھر سے متاثرہ افراد کی تعداد کا نیا ریکارڈ

ملک میں رواں برس ڈینگی مچھر کے کاٹنے سے متاثرہ افراد کی تعداد نے ایک نیا ریکارڈ قائم کردیا ہے۔ اب تک رواں برس 49 ہزار5 سو 87 افراد ڈینگی کے ڈنک سے متاثر ہوئے جبکہ دو ہفتے سے بھی کم مدت میں 5 ہزار زائد کیسز سامنے آئے ہیں۔
ذرائع کے مطابق اس سے پہلے ملک میں ڈینگی کے سب سے زیادہ کیسز 8 برس قبل رپورٹ کیے گئے تھے، 2011 میں 27 ہزار افراد اس سے متاثر ہوئے تھے۔تب ڈینگی مچھر کے کاٹنے سے 370 افراد جان کی بازی ہار گئے تھے، یہ تعداد رواں برس ہونے والی 79 اموات سے 4 گنا زیاہ تھی۔
ڈینگی کے کیسز میں اضافے کی بڑی وجوہات بتاتے ہوئے وزارت صحت کے ترجمان نے کہا کہ رواں برس دنیا بھر میں ڈینگی کے کیسز کی غیر معمولی تعداد رپورٹ ہوئی ہے۔انہوں نے کہا کہ ملک بھر میں ڈینگی کے کیسز ریکارڈ کرنے کے طریقہ کار میں بہتری آئی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ رواں سال کے دوران دنیا بھر میں ڈینگی کے کیسز غیر معمولی تعداد میں رپورٹ ہوئے اور دعویٰ کیا کہ پاکستان کی کارکردگی دیگر ممالک کے مقابلے میں بہتر ہے۔
ذرائع کے مطابق رواں سال کے دوران ملک بھر میں ڈینگی کے 49 ہزار 5 سو 87کیسز کی تصدیق ہوئی جس میں سب سے زیادہ 13 ہزار ایک سو 79 کیسز وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں رپورٹ ہوئے۔
سندھ میں ڈینگی کے تصدیق شدہ کیسز کی تعداد 13 ہزار 2 سو 51، پنجاب میں 9 ہزار 8 سو 55، خیبرپختونخوا میں 7 ہزار 7 سو 76 اور بلوچستان میں 3 ہزار 2 سو 17ہے۔
علاوہ آزاد کشمیر سے ایک ہزار 6 سو 90 کیسز رپورٹ کیے جبکہ 6 سو 25 کیسز کو ‘ دیگر’ کیٹیگری میں رکھا گیا ہے۔’دیگر’ کیٹیگری ان کیسز کی نشاندہی کرتی ہے جن کا اصل مقام معلوم نہیں ہوسکا۔
اسی طرح ڈینگی کے کاٹنے سے خیبرپختونخوا ارو گلگت بلتستان میں کوئی اموات رپورٹ نہیں ہوئیں جبکہ وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں 22 افراد جاں بحق ہوئے۔
علاوہ ازیں ڈینگی سے سب سے زیادہ اموات سندھ میں ہوئیں جن کی تعداد 33 ہے، پنجاب میں 22 بلوچستان میں 3 جبکہ آزاد کشمیر میں ڈینگی کے باعث ایک شخص کی وفات ہوئی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close