شاہ زین بگٹی این اے 259 پر دوبارہ پولنگ میں بھی کامیاب

جمہوری وطن پارٹی (جے ڈبلیو پی) کے صدر اور مرحوم نواب اکبر خان بگٹی کے پوتے نوابزادہ شاہ زین بگٹی نے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 259 کی نشست پر دوبارہ پولنگ میں بھی کامیابی حاصل کرلی۔ سرکاری نتائج کے مطابق شاہ زین بگٹی نے 29 پولنگ اسٹیشنز میں 20 ہزار 8 سو 95 ووٹ حاصل کیے جبکہ میاں خان بگٹی نے 2 ہزار 9 سو 54 اور میر طارق محمود نے صرف ایک سو 98 ووٹ حاصل کیے۔
خیال رہے کہ 2018 کے عام انتخابات میں شاہ زین بگٹی اپنی جماعت جمہوری وطن پارٹی کی ٹکٹ پر قومی اسمبلی کی نشست پر کامیاب ہوئے تھے، انہوں نے 22 ہزار 7 سو 87 جبکہ طارق محمود نے 21 ہزار 2 سو 13 ووٹ حاصل کیے تھے۔ حلف لینے کے بعد شاہ زین بگٹی نے وزیراعظم کے انتخاب میں عمران خان کی حمایت کی تھی۔ بعدازاں نواب اکبر خان بگٹی کے قریبی رشتے دار طارق محمود نے دھاندلی کا الزام عائد کرتے ہوئے شاہ زین بگٹی کے انتخاب کو چیلنج کیا تھا۔ طارق محمود نے الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) سے شاہ زین بگٹی کا انتخاب کالعدم قرار دینے کی درخواست کی تھی، جس پر الیکشن کمیشن نے ان کی درخواست منظور کرتے ہوئے 29 پولنگ اسٹیشنز میں دوبارہ پولنگ کا حکم دیا تھا۔
تاہم ای سی پی کا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج کیا گیا تھا تاہم عدالت نے الیکشن کمیشن کے فیصلے کو برقرار رکھا تھا۔ عدالت کی جانب سے فیصلہ برقرار رکھنے کے بعد گزشتہ روز سخت سیکیورٹی میں صبح 8 سے شام 5 بجے تک 29 پولنگ اسٹیشنز میں دوبارہ پولنگ ہوئی تھی جو بلاتعطل اپنے مقررہ وقت تک جاری رہی تھی۔ بلوچستان الیکشن کمیشن نے 115 پولنگ بوتھ قائم کیے تھے اور 31 امیدواروں نے دوبارہ پولنگ میں حصہ لیا تھا۔ 29 پولنگ اسٹیشنز پر رجسٹرڈ ووٹرز کی تعداد 47 ہزار 2 سو 69 تھی، جن میں 27 ہزار 8 سو 99 خواتین اور 19 ہزار 3 سو 70 مرد شامل تھے۔ خیال رہے کہ مقامی انتظامیہ نے 18 پولنگ اسٹیشن کو انتہائی حساس قرار دیا تھا تاہم انتخابی عمل کے دوران کوئی ناخوشگوار واقعہ رپورٹ نہیں ہوا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close