پاکستانی گاڑیاں ٹین کا ڈبہ ہیں

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی میں پاکستان میں بننے والی گاڑیوں کی معیار پرشدید تحفظات کا اظہار کیا گیا.
سینیٹر ساجد حسین طوری کی زیر صدارت سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائےصعنت کا اجلاس میں کمیٹی اراکین نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں بننے والی گاڑیاں عالمی معیار کے مطابق نہیں ہیں، گاڑیوں میں حادثے کی صورت میں بچاؤ کےلیے کوئی سہولیات بھی نہیں ہیں۔ ایڈیشنل سیکریٹری صنعت نے اجلاس کو بتایا کہ گاڑیوں کا معیارانتہائی گرا ہوا ہے،گاڑیاں ٹین کا ڈبہ آ رہی ہیں۔ حکام وزارت صنعت نے بتایا کہ ملک میں 18 گاڑیاں بنانےوالی کمپینوں کولائسنس جاری کیے جاچکے ہیں۔ نمائندہ آٹو مینو فیکچررزرانا اسحاق نےشکوہ کیا کہ ٹیکس لگنےکےباعث گاڑیوں کی پروڈکشن 60 فیصد کم ہوگئی ہے، گاڑیوں کی قیمتیں بڑھنے سے پاکستانیوں سے گاڑی خریدنے کا حق چھین لیا گیا۔ کمیٹی ممبر پرویز ملک نے کہا کہ گاڑیوں کی قیمتوں میں اضافےکےباعث لوگوں کی چیخیں نکل گئی ہیں۔ سینیٹ کمیٹی نے گاڑیوں کی قیمتوں میں اضافے پر ایف بی آر، وزرات خزانہ اورصعنت و تجارت کے حکام کو طلب کرلیا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close