نایاب عالمی ایوارڈ جیتنے والی پہلی پاکستانی خواجہ سرا

پاکستان میں خواجہ سرا کے حقوق کی کارکن، سیاستدان اور سماجی رہنما نایاب علی یورپی ملک آئرلینڈ میں ہر سال ہونے والے گالا ایوارڈز جیتنے والی پہلی پاکستانی خواجہ سرا بن گئیں۔’گالا ایوارڈز‘کی تقریب ہر سال آئرلینڈ کے دارالحکومت ڈبلن میں منعقد ہوتی ہے اور اس میں ہر سال 17 کیٹیگریز میں ایوارڈز دیے جاتے ہیں۔
رواں سال بھی ’گالا ایوارڈز‘ تقریب میں ’انٹرنیشنل ایکٹیوسٹ‘ سمیت مجموعی طور پر 17 کٹیگریز میں ایوارڈز دیے گئے اور پاکستانی خواجہ سرا کو ’انٹرنیشنل ایکٹیوسٹ‘ کا ایوارڈ دیا گیا۔ نایاب علی کو گزشتہ ماہ جنوری میں اس ایوارڈ کے لیے نامزد کیا گیا تھا اور ان کے ساتھ دیگر تین ممالک کے خواجہ سراؤں کو بھی ’انٹرنیشنل ایکٹیوسٹ‘ ایوارڈ کے لیے نامزد کیا گیا تھا۔
یہ ایوارڈ ایمنسٹی انٹرنیشنل سمیت دیگر عالمی سماجی تنظیموں کے تعاون سے دیا جاتا ہے اور وہی تنظیمیں دنیا کے مختلف ممالک سے تعلق رکھنے والے ٹرانس جینڈر افراد کو اس ایوارڈ کے لیے نامزد کرتے ہیں۔ پاکستانی خواجہ سرا نایاب علی کو جہاں پہلی بار اس ایوارڈ کےلیے نامزد کیا گیا تھا وہیں وہ ایوارڈ جیتنے والی بھی پہلی پاکستانی خواجہ سرا بن گئیں۔ اگرچہ نایاب علی طبیعت کی خرابی کی وجہ سے ایوارڈ تقریب میں شرکت نہیں کر پائی تھیں تاہم پھر بھی انہوں نے ایوارڈ دینے پر تنطیم کا شکریہ ادا کیا۔
خیال رہے کہ نایاب علی کو یہ اعزاز بھی حاصل ہے کہ انہوں نے ’سیکیورٹی ایکسچینج آف پاکستان‘ (ایس ای سی پی) میں بطور خواجہ سرا پہلی کمپنی حال ہی میں رجسٹرڈ کروائی تھی۔
نایاب علی گزشتہ ایک دہائی سے زائد عرصے سے خواجہ سرا افراد کے حقوق کےلیے کام کر رہی ہیں، انہوں نے ٹرانس جیںڈر افراد کو تعلیم اور فن کی تربیت دینے کےلیے ’خواجہ سرا کمیونٹی سینٹر‘ بھی بنا رکھا ہے جو پنجاب کے شہر اوکاڑہ میں ہے۔
علاوہ ازیں نایاب علی آل پاکستان ٹرانس جینڈر الیکشن نیٹ ورک‘ کی چیئرپرسن بھی ہیں اور وہ ان چند خواجہ سرا افراد میں شامل ہیں جنہوں نے 2018 کے عام انتخابات میں حصہ لیا تھا۔
نایاب علی نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) سے منحرف ہونے والی سیاستدان عائشہ گلالئی کی پارٹی کی ٹکٹ پر اوکاڑہ سے قومی اسمبلی کا انتخاب لڑا تھا مگر وہ کامیاب نہ ہوسکیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close