سینیٹ نے صدر ٹرمپ کے جنگ کے اختیارات محدود کردئیے

امریکی سینٹ نے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے جنگ چھیڑنے کے صوابدیدی اختیارات محدود کردئیے۔ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو کانگریس کی اجازت کے بغیر ایران کے خلاف فوجی کارروائی سے روکنے کی قرارداد منظور کر لی۔
ڈیموکریٹک پارٹی کے سینیٹر ٹم کین کی جانب سے پیش کی گئی قرارداد کے حق میں 8 ریپبلکن سینیٹرز نے بھی ووٹ دیئے اور 100 اراکین پر مشتمل ایوان نے قرارداد 45کے مقابلے میں 55 ووٹوں سے منظور کرلی۔ سینیٹر ٹم کین کا کہنا ہے کہ صدر ٹرمپ کو ایران کے خلاف کوئی بھی ایکشن لینے سے پہلے کانگریس سے منظوری لینا ہوگی۔
ٹم کین اور قرارداد کے حق میں ووٹ ڈالنے والے دیگر اراکین کا کہنا ہے کہ یہ قرارداد نہ تو ٹرمپ کے حوالے سے ہے اور نہ ہی صدر کے حوالے سے بلکہ یہ قرارداد جنگ کے اعلان کے حوالے سے کانگریس کے اختیارات کی اہمیت کے حوالے سے ہے۔
سینیٹر ٹم کین نے کہا کہ ٹرمپ یا دیگر صدور کے پاس کوئی بھی فوری حملہ کرنے کےلیے امریکا کے دفاع کی اہلیت ہو، ایک بھرپور جنگ کےلیے کانگریس میں بحث اور ووٹ ضروری ہوگا۔
خیال رہے کہ ڈیموکریٹک اکثریت والے ایوان نمائندگان نے بھی گزشتہ ماہ جنگ کے لامحدود اختیارات کے حوالے سے ایک قرارداد منظور کی تھی۔ ہاؤس کے اکثریتی رہنما اسٹینی ہائیر کا کہنا ہے کہ اس ماہ کے آخر میں سینیٹ کی قرارداد کو بھی ایوان نمائندگان میں پیش کیا جاسکتا ہے۔ صدر ٹرمپ کے اختیارات کو ویٹو کرنے کےلیے ایوان نمائندگان اور سینیٹ سے قراردادوں کی دو تہائی اکثریت سے منظوری لازمی ہوگی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close