ایم کیو ایم الطاف کی بھارتی فنڈنگ کے ثبوت سامنے آ گئے

ایم کیو ایم لندن سے متعلق اہم انکشافات منظر عام پر آئے ہیں، جن میں بھارتی فنڈنگ سے متعلق اہم ثبوت شامل ہیں۔جن میں ایم کیو ایم لندن کو بھارت کی جانب سے کی جانے والی فنڈنگ کی مالیت اور اس کی دیگر تفصیلات شامل ہیں۔ ذرائع کے مطابق سابق اس حوالے سے گورنر سندھ عشرت العباد وعدہ معاف گواہ بننے کیلئے بھی تیار ہوگئے ہیں۔
تفصیلات کے مطابق بھارت سے آنے والی فنڈنگ کو ایم کیو ایم لندن کے بینک اکاؤنٹس میں بھیجنے کا انکشاف ہوا۔مصدقہ ذرائع سے معلوم ہوا کہ پاکستان کے اہم اداروں نے ایم کیو ایم لند ن کو بھارتی فنڈنگ کے حوالے سے اہم ترین ثبوت حاصل کر لیے ہیں۔ اہم اداروں کو موصول ہونے والے ان ثبوتوں کے مطابق ایم کیو ایم لندن کو 50 ہزار پاؤنڈ ماہانہ کی فنڈنگ بھارت سے کی جا رہی تھی ۔
یہ فنڈنگ بھارت سے دبئی اور دبئی سے ایم کیوایم لندن کے بینک اکاؤنٹ میں جاتی تھیں ۔بھارت سے ہونے والی اس فنڈنگ کے بدلے پاکستان میں اہم اداروں کے خلاف نفرت پیدا کرنا، سندھ میں لسانی بنیاد پر فسادات برپا کرنا اور بھارتی خفیہ ایجنسی را کے ایجنٹس کو پناہ دینے جیسے کام کیے جارہے تھے ۔ ذرائع کے مطابق اس حوالے سے برطانیہ کے اداروں نے بھی پاکستانی اداروں کی مدد کی ۔ ایم کیو ایم لندن کے جس اکاؤنٹ میں رقم جاتی تھی اس حوالے سے اہم دستاویزات بھی پاکستانی اداروں کو فراہم کر دئے گئے ہیں۔
ذرائع کے مطابق اس منی لانڈرنگ کیس میں اہم ترین پیش رفت یہ ہے کہ سابق گورنر سندھ عشرت العباد سمیت تین مزید رہنما وعدہ معاف گواہ بننے کے لیے تیار بھی ہو گئے ہیں۔ اہم ذرائع نے بتایا کہ اس حوالے سے آئندہ چند روز میں ایک بڑی پیش رفت سامنے آنے کا امکان ہے کیونکہ سابق گورنر سمیت مزید تین رہنماؤں ان کے وعدہ معاف گواہ بننے کی صورت میں ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین کے خلاف سخت ترین کارروائی کی جا سکتی ہے۔ یاد رہے کہ الطاف حسین سے اسکواٹ لینڈ یارڈ پہلے بھی دو مرتبہ تفتیش کر چکی ہے.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close