قومی اسمبلی:شاہ محمود کو ہتھکڑی لگانے پراپوزیشن لیڈر کی کڑی تنقید

قومی اسمبلی اجلاس کے دوران اپوزیشن لیڈر عمرایوب نے شاہ محمود قریشی کو ہتھکڑی لگا کر عدالت پیش کرنے پرحکومت کو تنقید کانشانہ بناڈالا۔

 اپوزیشن لیڈر عمر ایوب خان کا اظہار خیال کرتے ہوئے کہنا تھا کہ مخدوم شاہ محمود قریشی کو ہتھکڑیوں میں 20 گھنٹے سفر کرایا گیا ہے۔اڈیالہ سے لاہور لے گئے، لاہور کے انسدادِ دہشت گردی عدالت کے جج نے کہا خدا کا خوف کریں، سنی اتحاد کونسل کو جلسے کی اجازت دے کر معطل کی گئی،چیف کمشنر نے توہین عدالت کی ہے،ہمارے ایوان کے ممبر اور سابق وزیر خارجہ ہیں۔20گھنٹے ہتھکڑیاں لگا کر سفر کرایا گیا ہے۔جج صاحب نے ریمارکس دیئے کہ یہ عزتدار شخص اور منتخب نمائندے رہے ہتھکڑیاں اتاری جائیں۔جج صاحب کے نوٹس کے باوجود ان کو ڈی ایس پی کی گاڑی کی بجائے ڈالے میں پیچھے بٹھا کر لایا گیا۔سپیکر قومی اسمبلی کو اس معاملے کا نوٹس لینا چاہیے۔

 عمر ایوب کا کہنا تھا کہ ہم قانون کی پاسداری کررہے ہیں مگر حکومت قانون پر عمل نہیں کررہی۔ہم ہر صورت اور ہر حال میں جلسہ کرینگے، ہم پُرامن لوگ ہیں، دیوار سے نہ لگایا جائے۔میں سچی باتیں کرتا ہوں مگر کچھ لوگوں کو کڑوی لگتی ہیں۔مجھے جس طرح گرفتار کرنے کی کوشش کی گئی اس سے استحقاق مجروح ہوا ہے۔اس معاملے پر میں تحریک استحقاق لاؤنگا، سپیکر کو خود بھی نوٹس لینا چاہیے۔قومی  سلامتی کے نام پر ایک ایس آر او جاری کیا گیا ہے۔

اپوزیشن لیڈر نے کہا کہ نیشنل سیکیورٹی کے کون سے خدوخال ہیں وہ واضح نہیں کئے گئے۔اس معاشرے کو بگ برادر کے حوالے کرنے سے متعلق ایس آر او جاری کرکے اختیار دیدیا گیا ہے۔یہ ایسے ہی قوانین ہیں جس سے سب سے پہلے حکومتی ارکان شکنجے میں آئینگے۔اس قانون پر دستخط کرکے وزیراعظم نے گزشتہ رات اپنی شہ رگ کاٹ دی ہے۔اس قانون کے نرغے میں حکومت، اپوزیشن، وکلا اور صحافیوں سمیت سب کو ہتھکڑیاں لگیں گی۔

 عمر ایوب نے مزید کہنا کہ  بلاول بھٹو زرداری نے پشاور جاکر پریس کانفرنس کی۔پختونوں کے خلاف جس تعصب کا اظہار کیا اسکی مذمت کرتا ہوں۔وہاں جاکر کہا کہ دہشت گردی پختون علاقے سے پھیل رہی ہے۔ان کو اپنے کچے کے ڈاکوؤں کی فکر کرنی چاہیئے۔ان کو اس کرپشن کی فکر کرنی چاہیے جن کی پیسے گننے والی مشینیں خراب ہو جاتی ہیں مگر پیسے ختم نہیں ہوتے۔بلاول جب بھی پشاور جاتے ہیں روتے ہیں اس معاملے پر وزیر اعلی کے پی سے گلہ کرونگا۔علی امین کو کہوں گا کہ اب بلاول آئے تو شفقت کیساتھ پیش آئیے گا تاکہ وہ روئیں نہیں۔

اپوزیشن لیڈر کاکہنا تھا کہ الیکشن کمیشن نے ہم سے انتخابی نشان لیا ان کے خلاف کارروائی لازمی ہونی چاہیے۔

Back to top button