مولانا ڈیزل اور اڈیالہ کا عمرانڈو سچے پریمی کیوں نہ بن پائے؟

ماضی میں ایک دوسرے کو مختلف القابات اور الزامات سے نوازنے والی پی ٹی آئی اور جے یو آئی کی محبت پروان نہ چڑ سکی۔ مولانا اور عمران خان کی جانب سے ایک دوسرے کو استعمال کرنے کے حوالے سے عزائم میں ناکامی کے بعد دونوں جماعتوں کا مل کر شہباز حکومت کو ٹف ٹائم دینا بھی اب نا ممکن دکھائی دیتا ہے۔ اس طرح مولانا اور کپتان کی پریم کہانی انجام سے پہلے ہی ٹھس ہو گئی۔

پی ٹی آئی اور جے یو آئی کے مابین اتحاد میں ناکامی کے حوالے سے اردو نیوز کی ایک رپورٹ کے مطابق جب اسد قیصر اور خیبر پختونخوا سے پی ٹی آئی کے دیگر زعما مولانا کے ہاں تواتر سے حاضری دینے لگے تو کپتان نے پارٹی کو ہدایات جاری کر دیں کہ خبردار! آئندہ کوئی مولانا کے بارے میں منفی ریمارکس نہ دیے جائیں۔ جس کے بعد ماضی کے دو بدترین حریفوں کے بیچ میل ملاقاتوں سے قربتیں بڑھنے لگیں، حالیہ انتخابات میں دھاندلی پر مؤقف بھی ایک ہوا، اداروں کی مداخلت پر بھی پر فریقین کے ہاں یکسوئی آ گئی اور تو اور بلوچستان اور خیبر پختونخوا میں دہشتگردی کے خلاف آپریشز کی مخالفت میں بھی دونوں جماعتوں کے بیچ ہم آہنگی دیکھنے کو ملی۔ لیکن پھر اچانک مولانا نے اعلان فرمایا کہ امریکی ایوان نمائندگان سے پاس ہوئی قرارداد پاکستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت ہے، انہوں نے البتہ یہ سب کہتے ہوئے پاکستان کی سفارتکاری پر بھی سنجیدہ سوال اٹھائے۔اگلے ہی روز مخصوص نشستوں کے کیس میں جے یو آئی ف کے وکیل سینیٹر کامران مرتضیٰ نے سپریم کورٹ کے روبرو فرمایا کہ ان کی جماعت کا اس معاملے میں مؤقف وہی ہے جو الیکشن کمیشن آف پاکستان کا ہے۔ گویا دو اہم ترین مدعوں پر مولانا نے پی ٹی آئی کے ساتھ بڑھتی ہوئی قربتوں کو یکسر ایک دو رویا لکیر سے پرے دھکیل دیا۔

ابھی اس خلیج کو پاٹنے کے لیے اسد قیصر اور دیگر ایک بار پھر سرگرم عمل تھے کہ مولانا نے کچھ عرصہ قبل اپنے ایک انٹرویو میں مزید فرمایا کہ ’ہم نے اسٹیبلشمنٹ سے تلخیاں مول لیں، ہم نہیں جھکے، ہم نے خود بھی سوچا کہ بجائے شدت کی سیاست کے اور اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ ٹکراؤ کی زندگی گزارنے کے کیوں نہ ہم اصلاح احوال کی جانب جائیں؟ ایک سوال کے جواب میں مزید کہا کہ ’ایک ہے انقلاب، ایک ہی جمہوری رویہ، جمہوریت میں تدریجی اصلاحات کا تصور ہوتا ہے، یکدم سے انقلاب کا تصور نہیں ہوتا۔ ایک سٹیج سے دوسرے سٹیج میں جانے کے لیے گزارہ کرنا ہوتا ہے ٹائم دینا ہوتا ہے۔ تاکہ ہم اس وقت تک اپنے آپ کی پہچان کروا سکیں اور انہیں بھی سمجھ آئے کہ یہ کیا لوگ ہیں اور کس طرح جینا چاہتے ہیں۔ ہم نے ثابت کر دیا کہ ہر چند کہ ہمیں دیوار سے لگانے کی کوشش کی گئی لیکن ہم نے اپنی حب الوطنی پر کمپرومائز کیا نہ ہم نے اپنے نظریات پر سمجھوتا کیا، اور آج جمیعت علما ملکی سیاست میں عوامی قوت ہے مسلکی قوت نہیں ہے۔‘اور یوں ایک مقبول ترین سیاسی جماعت اور ایک دبنگ مذہبی قوت کے بیچ پریم کہانی اپنے جوبن پر پہنچے سے پہلے ہی دم توڑ گئی۔

وہ پریم کہانی جس کے پروان چڑھتے ہی انقلاب کی نوید سنائی جا رہی تھی جس کے کرداروں میں اپوزیشن الائنس کی چھ جماعتوں کے تگڑے رہنماؤں کو امید تھی کہ انقلاب کی اس ٹرین کا انجن اگر حضرت مولانا کی جماعت بن گئی تو یہ کراچی سے پشاور تک حقیقی معنوں میں خیبر میل کی بلٹ ٹرین بن جائے گی جسے روکنا ناممکن ہو جائے گا۔مگر ایسا نہ ہوسکا، مولانا نے الگ سے اپنے انقلاب کے لیے علیحدہ پٹری کا انتخاب کیا جو عین تہتر کے آئین کے تناظر میں بیان کیا جا رہا ہے۔ اس تناظر میں اسٹیبلشمنٹ سے مزید ٹکراؤ اور یکدم انقلاب کی نفی کی جا رہی ہے اور جمہوری رویوں سے نئے چناؤ کی مانگ کی جا رہی ہے۔ لیکن یہاں اہم ترین سوال یہ ہے کہ ان دو قوتوں کا مِلاپ معنی خیز انجام تک کیوں نہ پہنچا؟ مبصرین کے مطابق بظاہر تو مولانا پی ٹی آئی قیادت کی عدم دلچسپی اور غیر سنجیدگی پر نالاں ہیں لیکن در حقیقت بقول شخصے مولانا پس پردہ ہوئی چند ملاقاتوں کے اثر میں بھی تھے۔ یہ اثرات دو رخے تھے، یعنی معاملہ عہدوں کا یا کسی اور پرکشش آفر کا نہیں تھا۔معاملہ ردعمل کا تھا جو مولانا اور کپتان کے مِلاپ سے سامنے آنے کا خدشہ تھا۔ شورٰی کے اجلاسوں میں کسی حد تک اس مدعے پر بین السطور روشنی بھی ڈالی گئی اور یوں پتلی گلی سے مناسب سا انقلاب برپا کرنے کا تصور معرض وجود میں آیا۔یہاں یہ مسئلہ بھی انتہائی اہمیت کا حامل ہے کہ پی ٹی آئی نے معنی خیز مذاکرات کے لیے کمیٹیوں کی تشکیل میں روایتی لیت و لعل کا مظاہرہ کیا کیونکہ دستیاب قیادت ہمیشہ ٹھوس اقدامات اٹھانے سے قاصر رہی۔

مبصرین کے مطابق دونوں جماعتوں کے اتحاد میں خیبر پختونخوا کی سیاست اور علی امین کا حلقہ احباب بھی ایک بڑی رکاوٹ تھی۔ مولانا صوبے کی سطح پر ایک ایسی کمیٹی کی تشکیل چاہتے تھے جس کے ذریعے سیاسی جدوجہد کے علاوہ صوبائی سیاست کے معاملات کو بھی آسان بنایا جا سکے۔ مولانا سے انگیج ہوئی قیادت میں اسد قیصر اور اخونزادہ حسین کے علاوہ دیگر زعما کے ہاں وہ سنجیدگی سرے سے ہی نہیں تھی جس کی مولانا کو تلاش تھی۔جیل بیٹھے کپتان نے جہاں مولانا کے خلاف بیان بازی سے پارٹی کو روکا وہیں انہوں نے مشترکہ جدوجہد کے لیے بھی گرین سگنل دے رکھا تھا۔ تاہم جیل سے باہر دستیاب قیادت بروقت مولانا کے ساتھ فطری طور پر بنتے اتحاد کو عملی جامہ نہ پہنا سکی۔ اس مِلاپ میں جیسے ہی ہلکا سا خلا آیا، شہباز سرکار اِن ایکشن دکھائی دی۔ مولانا نے سرکار کے ساتھ کسی آپشن پر بھی ہاں کرنے سے انکار کرتے ہوئے پی ٹی آئی کو مزید موقع دیا لیکن اس بیچ شاید تاخیر ہوچکی تھی اور یہ لو سٹوری عبرتناک انجام کا شکار ہو گئی۔

Back to top button