عمران خان نے ایک بار پھرانتخابات کا مطالبہ کردیا

بانی پی ٹی آئی عمران خان نے ایک بار ملک میں شفاف انتخابات کا مطالبہ کردیا۔

اڈیالہ جیل میں صحافیوں سے غیررسمی گفتگو کرتے ہوئے عمران خان کاکہنا تھا کہ پاکستان کو بچانا ہے تو شفاف الیکشن کے علاؤہ کوئی راستہ نہیں ۔ساری الیٹ کے پیسے باہر پڑے ہیں۔موجودہ حکومت نے پاکستان کی امید ختم کردی ہے۔کسی کو اس حکومت پر بھروسہ نہیں رہا۔الیکشن میں تاریخی دھاندلی ہوئی ہے۔

بانی پی ٹی آئی کا کہنا تھا 2021میں ملک کا قرضہ 2.8 ٹریلین تھا۔چار سال میں ملک کے قرضے 8 سے 9 ٹریلین تک پہنچ گئے۔جس غریب کا 2 ہزار بل آتا تھا اب اسکا 10 ہزار بل آتا ہے۔موجودہ حکومت نے پاکستان کی امید ختم کردی ہے۔کسی کو اس حکومت پر بھروسہ نہیں رہا۔الیکشن میں تاریخی دھاندلی ہوئی ہے۔چیف جسٹس پاکستان ہمیں انصاف کیلئے الیکشن کمیشن بھیج رہا ہے۔سب کو معلوم ہے الیکشن کمیشن نے فراڈ الیکشن کرائے۔

عمران خان کاکہنا تھاکہ مشکل فیصلے وہ کرتا ہے جس کے پیچھے عوام کھڑی ہو۔قاضی فائز عیسیٰ ہمیں کہہ رہا ہے انٹرا پارٹی الیکشن کیوں نہیں کرائے۔کیا چیف جسٹس کو نہیں معلوم ہماری ساری پارٹی انڈر گراؤنڈ تھی۔شفاف الیکشن کیلئے اسٹیبلشمنٹ کو پیچھے ہٹنا پڑے گا۔اسٹیبلشمنٹ نے ملک کو بچانا ہے تو شفاف الیکشن کی طرف جانا ہوگا۔سپریم کورٹ آف پاکستان میں ہماری انسانی حقوق اور 8 فروری کی پٹینشز کیوں نہیں سنی جارہی۔کون سی جمہوریت میں ملٹری کورٹس میں سویلین کے ٹرائل ہوتے ہیں۔

بانی پی ٹی آئی کاکہنا تھا کہ مجھے اس طرح ٹریٹ کیا جارہا ہے جیسے میں نے پاکستان میں سب سے بڑی غداری کی ہو۔جمہوریت اخلاقی رویوں پر چلتی ہے۔کانگریس کہہ رہی ہے پاکستان میں فراڈ الیکشن ہوئے ہیں۔میڈیا کو دبانے کیلئے منصوبہ بندی کی جارہی ہے۔ہمارے دور میں سب سے زیادہ دہشت گردی ہوئی ہے۔

Back to top button