اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قدر227.75 روپے پر مستحکم رہی

پاکستانی روپے کے مقابلے میں آج ڈالر کےانٹربینک ریٹ 40 پیسے بڑھ کر 221.82 روپے کی سطح پر بھی آگئےتھے تاہم کاروبار کے اختتام پر ڈالر کے انٹربینک ریٹ 22 پیسے کےاضافے سے 221.64 روپے کی سطح پر بند ہوئے جبکہ اوپن کرنسی مارکیٹ میں اس کے برعکس پانچویں دن بھی ڈالر کی قدر بغیر کسی تبدیلی کے227.75 روپے پر مستحکم رہی۔

ماہرین کا اس ضمن میں کہنا تھا ڈالر کی اسمگلنگ پر قابو پانے اورغیر ضروری خریداری پر قدغن لگانے کے باوجود ڈیمانڈ بڑھتے ہی ڈالر کی پیش قدمی شروع ہوجاتی ہے، ملکی زرمبادلہ کے موجودہ ذخائر کے ذریعے بمشکل پانچ ہفتے کی درآمدات ممکن ہے اور محسوس ہوتا ہے کہ ملکی زرمبادلہ کے ذخائر میں مطلوبہ اضافہ دوست ممالک کے تعاون اور عالمی مالیاتی اداروں کی فنڈنگ پرمنحصر ہوگیا ہے۔

کرنسی مارکیٹ کے ذرائع کا کہنا ہے کہ افغانستان کی معیشت کا بوجھ بھی پاکستان کے ڈالر ذخائر پر ہے۔ ڈالر کی قدر بڑھنے سے درآمدات مہنگی ہوگئی ہیں اور حالیہ قدغن کے سبب مقامی صنعتوں میں استعمال ہونے والے 60 فیصد خام مال کی درآمدات بھی مشکل ہوگئی ہے۔

تجزیہ کاروں کے مطابق ملک میں ڈالر کی قدر میں محدود اتارچڑھاؤ کا تسلسل اس وقت تک جاری رہے گا جب تک عالمی بینک آئی ایم ایف اور ایشین انفرا اسٹرکچر بینک سے مطلوبہ فنڈز آمد نہ ہو اور برادر دوست ملک سعودی عرب کی جانب بھاری نوعیت کی سرمایہ کاری نہ ہو۔

Related Articles

Back to top button