بینکوں نے اے ٹی ایم کا استعمال مہنگا کیوں بنا دیا؟

بینکوں نے صارفین کے لیے اے ٹی ایم مشینوں کا استعمال مزید مہنگا بنا دیا ہے، اپنے اکائونٹ والے بینک کی اے ٹی ایم مشین سے رقم نکلوانے پر اب صارفین کو 4.69 روپے ادا کرنا ہوں گے جبکہ دیگر بینکس کی اے ٹی ایم مشین سے پیسے نکالنے پر 23.45 پیسے ادا کرنا پڑیں گے۔ اگر آپ ایسے بینک کی اے ٹی ایم مشین سے پیسے نکال رہے ہیں جہاں آپ کا اکاؤنٹ نہیں ہے تو وہاں آپ کو فی ٹرانزیکشن 23.45 پیسے ادا کرنے ہوں گے، اس سے قبل اپنے بینک کے علاوہ دیگر بینکوں کی اے ٹی ایم مشینوں سے پیسے نکلوانے پر صارفین کو 18.75 روپے ادا کرنا پڑتے تھے۔

کمرشل بینکوں کے نئے شیڈول کے مطابق اب دیگر بینکوں کی اے ٹی ایم مشینوں سے آپ اپنا اکاؤنٹ بیلنس چیک کریں گے تو آپ

آئین شکن قاسم سوری قومی اسمبلی میں گند ڈالنے پر مصر

کے اکاؤنٹ سے 2.50 روپے کے بجائے 3.13 روپے کٹیں گے۔

سوشل میڈیا صارفین بھی اے ٹی ایم مشینوں اور بڑھائے گئے چارجز پر بات کرتے ہوئے نظر آ رہے ہیں۔

سمیت راٹھور نامی صارف نے لکھا کہ اے ٹی ایم سے پیسے نکالنے کے عوض چارجز بڑھانا پاکستان کی معیشت کے لیے ایک بڑا دھچکا ہے، ان کا کہنا تھا کہ جتنے چارجز زیادہ ہوں گے اتنی ہی بینکوں تک رسائی میں صارفین کی حوصلہ شکنی ہو گی۔اسفندیار نامی صارف نے لکھا کہ دنیا بھر میں پیپر لیس ٹرانزیکشن کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے لیکن پاکستان میں پیپرلیس ٹرانزیکشن کے لیے بھی پیسے ادا کرتے ہیں۔

واضح رہے پاکستان میں اے ٹی ایم مشینوں سے پیسے نکالنے پر بڑھائے گئے چارجز رواں سال دسمبر تک نافذ العمل رہیں گے۔

Related Articles

Back to top button