ایرانی رکن پارلیمنٹ نے بے حجاب خواتین کو جسم فروش قرار دیدیا

ایران کے ایک رکن پارلیمنٹ نے مھسا امینی کی موت پر برہنہ سر احتجاج کرنے والی خواتین کو فسادی اور جسم فروش قرار دیدیا۔

عالمی میڈیا رپورٹ کے مطابق کے مطابق ایران کے رکن پارلیمنٹ محمود نباویان نے مھسا امینی کی پولیس کی حراست میں موت پر احتجاج کرنے والی خواتین کے بارے میں نازیبا زبان استعمال کرتے ہوئے کہا کہ برہنہ سر احتجاج کرنے والی خواتین فسادی اور جسم فروشی کے لیے نکلی ہیں۔

محمود نباویان نے کہا خواتین کا سرعام حجاب نہ کرنا یا اسکارف اتارنا عوام میں برہنہ ہونے کے مترادف ہے اور ایسی خواتین منافق، فسادی، ٹھگ اور فتنہ پرست ہیں۔

واضح رہے کہ یہ بیان اس وقت سامنے آیا ہے جب حجاب درست طریقے سے نہ کرنے کے الزام میں ایرانی پولیس کے زیر حراست نوجوان لڑکی مھسا امینی کی موت کے خلاف ملک بھر احتجاج کیا جا رہا ہے جس میں کئی خواتین نے حجاب اتارے اور سر کے بال کاٹے۔

رپورٹس کے مطابق پولیس نے ان احتجاجی مظاہروں کو طاقت کے ذریعے روکنے کی کوشش کی جس پر مظاہرین مشتعل ہوگئے اور اس دوران پولیس سے جھڑپیں بھی ہوئیں جس میں اب تک 76 افراد ہلاک اور 900 سے زائد زخمی بھی ہوئے۔

رپورٹس میں ایرانی پولیس کے حوالے سے بتایا گیا کہ اب تک 1,200 سے زیادہ افراد کو گرفتار کیا گیا ہے جن میں سیاسی جماعت کے کارکن، وکلا اور صحافیوں کے ساتھ ساتھ مظاہرین بھی شامل ہیں۔

Related Articles

Back to top button