استعفے ہمارے ایٹم بم ہیں، اس کے استعمال کی حکمت عملی مل کر اپنائیں گے

پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ پارلیمنٹ سے اپوزیشن جماعتوں کا استعفیٰ دینا ہمارا ایٹم بم ہے اور اس کے استعمال کی حکمت عملی مل کر اپنائیں گے۔
لاہور میں کوٹ لکھپت جیل میں مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف سے ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ حکمرانوں میں اہلیت نہیں کہ ملک چلا سکیں، ناجائز حکمرانوں میں سچ سننے کا حوصلہ نہیں۔ان کا کہنا تھا کہ حکومت کی ذاتی لڑائی کی وجہ سے شہباز شریف کو جیل میں ڈالا گیا ہے اسی وجہ سے ملک ترقی نہیں کر رہا۔انہوں نے کہا کہ عوام مہنگائی کے سونامی میں ڈوب رہی ہے، چینی چوری آٹا چوری کے بعد اب گیس کا بحران بھی آنے والا ہے، عمران خان عوام کے مسائل کو حل کرنے کے لیے کام ہی نہیں کرتے، یہ پاکستان کے ساتھ نا انصافی ہے۔بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ ‘ہماری جدوجہد پاکستان میں حقیقی جمہوریت بحال کرنا ہے جو عوام کی نمائندہ ہو اور عوام کے مسائل حل کرے’۔ان کا کہنا تھا کہ شہباز شریف نے جب بھی مل کر کام کرنے کی بات کی تو حکومت نے انکار کیا ہے اور وہ چاہتے ہیں کہ صرف مخالفین کو جیل میں رکھیں’۔انہوں نے کہا کہ ‘پاکستان ڈیموکریٹک الائنس (پی ڈی ایم) میں شامل تمام اپوزیشن جماعتیں ایک پیچ پر ہیں اور ان کی ایک ہی منزل ہے، پیپلزپارٹی پی ڈی ایم ایک پیج پر مل کر فیصلےکررہے ہیں اور استعفے جمع ہو رہے ہیں’۔ان کا کہنا تھا کہ ‘استعفے ایٹم بم ہے اس کے استعمال کے حوالے سے پی ڈی ایم مل کر لائحہ عمل بنائے گی’۔چیئرمین پیپلز پارٹی کا کہنا تھا کہ ‘پہلی حکومت ہے جو اتنی گر گئی ہے کہ والدہ کی لاش پر سیاست کرتے ہیں جس کی ہم مذمت کرتے ہیں، وزیر اعظم کو مجبور ہوکر کرسی چھوڑ نا پڑے گی اس طرح ملک نہیں چل سکتا’۔ان کا کہنا تھا کہ ‘حکومت کو گھر بھیجنا پڑے گا اس کٹھ پتلی وزیر اعظم کو پیغام دے رہاہوں کہ مستعفی ہو جائے، ملک کو مسائل سے نکالنے کے لیے عمران خان کی ناجائز حکومت کو گھر بھیج کر دم لیں گے’۔بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ ‘پاکستان کا شرح نمو افغانستان سے نیچے ہے کیا قسمت میں عوام کو غریب رہنا ہی لکھا ہے، فارن فنڈنگ کیس، بی آر ٹی، کے الیکٹرک، چینی چور کو اگر حکومت نے نہیں پکڑا تو کچھ نہیں کیا’۔ان کا کہنا تھا کہ ‘عمران خان نے ملک میں کرپشن والے مافیا کو دوسال سےزائد تحفظ دیا ہے۔ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ ‘شہید بی بی بھٹو اور زرداری پر بھی جھوٹےکیسز بنے تھے، جھوٹے کیسز کے مقابلے کرتے رہیں گے مگر ان کے جانے کے بعد جو کیسز ان پر بنیں گے ان میں عمران خان نہیں چھوٹے گا’۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button