17 کا ہندسہ جنرل عاصم منیر کے لیے لکی نمبر کیسے ہے؟

 

پاکستان آرمی کے سترہویں فوجی سربراہ بننے والے جنرل عاصم منیر کی زندگی میں 17 کے ہندسے کا کافی عمل دخل دکھائی دیتا ہے اور اسے ان کے لئے خوش قسمتی کی علامت قرار دیا جا رہا ہے۔ علم الاعداد میں 17 کے ہندسے کو روحانی، متحرک اور توانا خیال کیا جاتا ہے۔

یہ ہندسہ خوشیوں اور محبت کی علامت ہے اور شہرت اور طاقت کا حامل ہوتا ہے۔  نئے آرمی چیف جنرل عاصم منیر کی زندگی میں بھی 17 کے ہندسے کا گہرا عمل دخل رہا ہے۔ جب انھوں نے آفیسرز ٹریننگ سکول منگلا سے بطور کیڈٹ فوجی تربیت حاصل کی تو وہ 17 ویں کورس کا حصہ بنے اور دورانِ تربیت عسکری روایات کی کامیابی سے پاسداری کرنے پر اعزازی شمشیر حاصل کرنے والے پہلے آرمی چیف ٹھہرے۔ پھر جون 2019 کی 17 تاریخ کو ہی عاصم منیر کو بطور کور کمانڈر گوجرانوالہ کور کی کمانڈ سونپی گئی۔ علم الاعداد کی روشنی میں 17 نمبر کو روحانی نمبر بھی کہا جاتا ہے،

اس سے جرنے والی شخصیات انتہائی خوش قسمت سمجھی جاتی ہیں جن پر اللہ کی خاص عنایات ہوتی ہیں۔ یہ عزت، وقار، طاقت اورخوشحالی کی علامت سمجھے جاتے ہیں، ایسے افراد ارادوں کے پکے اور قول کے سچے ہوتے ہیں، اور سٹریٹ فارورڈ ہونے کی وجہ سے ان لوگوں کی شخصیت میں شاید ہی آپ کو تضاد دیکھنے کو ملے۔ یہی وجہ ہے کہ ایسے لوگ اکثر دوسروں کی غیر حقیقی توقعات پر پورے نہیں اترتے اور انھیں فیصلے کا ووت آنے پر حیران کر دیتے ہیں۔ 17 کے ہندسے سے جڑے ہوئے افراد کو ناممکن کو ممکن بنانے میں بھی کمال حاصل ہوتا ہے۔   تاہم اس نمبر سے جُڑی ہوئی شخصیات کے لئے ضروری ہے کہ وہ کسی بھی نتیجے پر پہنچنے سے پہلے انتہائی باریک بینی سے حالات کا تجزیہ کریں۔

حیرت انگیز طور پر 17 نمبر سے وابستہ وگ مذہب سے خاص لگاؤ رکھتے ہیں۔ یاد رہے کہ جنرل عاصم منیر کو پاکستان کے پہلے حافظ قرآن آرمی چیف بننے کا اعزاز بھی حاصل ہوا ہے۔ ان کے والد سرور منیر بھی حافظ قرآن تھے جبکہ ان کے دونوں بھائی بھی حافظ قرآن ہیں۔ جنرل عاصم راولپنڈی کے رہائشی ہیں اور ان کے والد نے اپنے علاقے میں ایک مسجد بھی تعمیر کروائی تھی۔

علم الاعداد کے مطابق 17 کے ہندسے میں ایک نمبر طاقت کا جبکہ سات نمبر اثر ورسوخ اور اختیارات کا مظہر ہوتا ہے۔ ہلال امتیاز ملٹری سمیت کئی اعلیٰ فوجی اعزازات رکھنے والے جنرل عاصم نے اپنے ملٹری کیریئر کا آغاز 1986 میں کیا اور پاک فوج کی 23 فرنٹیئر فورس رجمنٹ میں کمیشن حاصل کیا۔ جنرل عاصم فورس کمانڈر نادرن ایریاز اور کوارٹر ماسٹر جنرل جی ایچ کیو بھی رہے ہیں۔ انھیں 2017 میں ڈائریکٹر جنرل ملٹری انٹیلی جنس اور 2018 میں ڈائریکٹر جنرل انٹر سروسز انٹیلی جنس تعینات کیا گیا، اس طرح عاصم پاک فوج کے واحد آرمی چیف ہیں جو کہ آئی ایس آئی اور ایم آئی دونوں کے سربراہ رہے ہیں۔

جنرل عاصم کے بارے میں ایک اہم بات یہ ہے کہ انہوں نے ماضی کے پاکستانی فوجی سربراہوں کی طرف مغرب یا یورپ سے ملٹری کورسز نہیں کیے۔ خیال رہے کہ برگیڈیئر سے ٹو یا تھری سٹار جنرل بننے کے لیے پاکستانی جرنیلوں کو امریکہ، انگلینڈ آسٹریلیا یا کینیڈا سے ملٹری کورسز کرنے پڑتے ہیں لیکن عاصم منیر نے اپنے دونوں ملٹری کورسز جاپان اور انڈونیشیا سے کیے۔

Related Articles

Back to top button