ملک ریاض کی لیکڈ آڈیو ٹیپ جینوئن ہونے کی تصدیق

راولپنڈی کے باخبر حلقوں نے بحریہ ٹاؤن کے کھرب پتی مالک ملک ریاض حسین کی اپنی بیٹی عنبر کے ساتھ ٹیلی فونک گفتگو کی لیکڈ آڈیو کو جینوئن قرار دیتے ہوئے ان کے اس موقف کو رد کر دیا ہے کہ یہ آڈیو ڈیپ فیک ٹیکنالوجی کے ذریعے بنائی گئی اور آواز انکی نہیں ہے۔ پچھلے ہفتے بھی ملک ریاض کی سابق صدر آصف علی زرداری کے ساتھ ٹیلی فون پر گفتگو کی ایک آڈیو سوشل میڈیا پر لیک ہو گئی تھی جس میں بحریہ ٹاؤن کے مالک عمران خان کے ایما پر آصف زرداری کے ساتھ ڈیل کرنے کی ناکام کوشش کرتے سنائی دیتے ہیں۔ تاہم گفتگو کا اختتام آصف زرداری کی جانب سے انکار پر ہوتا ہے۔ اس آڈیو کے لیک ہونے پر حکومت اور ملک ریاض دونوں کا یہ موقف تھا کہ وہ آصف زرداری سے کسی خان کے بارے میں بات کر رہے ہیں لیکن عمران خان کا نام کہیں نہیں آتا۔ دوسری جانب باخبر حلقوں کا دعویٰ ہے کہ دراصل یہ آڈیو عمران کے خلاف تحریک عدم اعتماد دائر ہونے کے بعد کی ہے جب وہ ملک ریاض کے ذریعے آصف زرداری سے تحریک واپس لینے کے لیے منت ترلے کر رہے تھے۔

اوپن مارکیٹ میں ڈالر پھر201 روپے کا ہوگیا

لیک ہونے والی تازہ آڈیو ریکارڈنگ ملک ریاض اور ان کی بیٹی عنبر کی گفتگو پر مبنی ہے جس سے اندازہ ہوتا ہے کہ عمران کی اہلیہ بشری ٰبی بی نے ملک ریاض کا کوئی پھنسا ہوا کام کروانے کے لیے ان سے فرح گوگی کے ذریعے ایک کروڑ روپے کی ہیرے کی انگوٹھی کا مطالبہ کیا تھا۔ لیک ہونے والی آڈیو میں ملک ریاض اور ان کی بیٹی عنبر فرح خان سے ہونے والی بات چیت اور فرمائشوں بارے گفتگو کر رہے ہیں۔ آڈیو میں عنبر کو اپنے والد کے ساتھ کسی کام کے عوض ہیرے کی انگوٹھی دینے کا ذکر کرتے ہوئے سنا جاسکتا ہے۔ عنبر اپنے والد ملک ریاض سے کہہ رہی ہیں کہ فرح گوگی کا فون آیا تھا اور وہ کہہ رہی ہے کہ پہلے والی انگوٹھی واپس منگوا لیں لہذا میں نے واپس منگوا لی ہے کیوں کہ اس نے کہا تھا ہفتے کو میری بشریٰ سے ملاقات ہے اس لیے اس ملاقات سے پہلے تین قیراط کی بجائے پانچ قیراط کے ہیرے کی انگوٹھی کا بندوبست کیا جائے۔

اس آڈیو ٹیپ میں ملک ریاض کی بیٹی بتاتی ہے کہ فرح گوگی نے کہا ہے کہ عمران خان صاحب کا فون آیا تھا کہ صبح آپکی سائیٹ کے تالے کھل جائیں گے، خان صاحب نے کہا ہے کہ مرضی کی رپورٹ جمع کروائی گئی ہے اور میں گارنٹی دیتا ہوں کہ لیٹر بھی کل آپ کو مل جائے گا اور تالے بھی کھل جائیں گے۔ لیک آڈیو میں عنبر کو کہتے ہوئے سنا جا سکتا ہے کہ میں نے فرح گوگی پر پوری چڑھائی کی، میں نے کہا ہے کہ فرح دیکھو ہمارا اب تک ایک بھی کام نہیں ہوا، عمران خان صاحب نے بھی 4 دن لے لیے ہیں، ابھی تک لیٹر نہیں آیا اور تالے بھی لگے ہوئے ہیں، ہمارا کیا بنے گا۔ اس پر فرح گوگی نے کہا کہ تم فکر مند نہ ہو اور یہ کہ کل لازمی لیٹر مل جائے گا۔ راولپنڈی میں باخبر ذرائع کا دعویٰ ہے کہ دراصل ملک ریاض نے عمران خان کی اہلیہ کو جو مسئلہ حل کرنے کے لیے ہیرے کی انگوٹھی بطور رشوت دی وہ بحریہ ٹائون پشاور سے متعلقہ تھا کیونکہ خیبر پختونخوا حکام نے 2019میں اس پروجیکٹ کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے اس کے دفاتر کو تالے لگا دیے تھے۔ سوشل میڈیا پر اب وہ خط بھی وائرل ہو چکا ہے جس کے ذریعے بحریہ ٹاؤن پشاور کے دفاتر کو سیل کرنے کے احکامات جاری کیے گئے تھے۔

لیک ہونے والی آڈیو ٹیپ میں ایک اور کال بھی شامل ہے جس میں ملک ریاض کو ان کی بیٹی کہتی ہیں کہ گوگی کا فون آیا تھا کہ بشریٰ بی بی معذرت کر رہی ہیں، جس پر میں نے کہا کہ کوئی بات نہیں بس ٹائم لے لیں، فرح گوگی نے کہا ہے کہ جو چیز تم نے بھیجی ہے وہ مجھے اچھی نہیں لگی۔ وہ خاتون اول ہیں، ان کے لیے تو یہ عام چیز ہے، وہ کہتی ہے کہ یہ تم واپس لے لو اور کوئی مہنگا تحفہ دو۔ ملک ریاض جواب میں کہتے ہیں کہ وہ جو کہتی ہے وہی اسے دلا دو، اس پر عنبر نے کہا ہے کہ میں اسے 5 قیراط کا ہیرا دے دیتی ہوں اور پچھلا ہیرا واپس منگوا لیتی ہوں۔ آڈیو ٹیپ میں ملک ریاض اپنی بیٹی سے مزید کہتے ہیں کہ تمہیں پہلے پوچھ لینا چاہیے تھا کہ کتنے قیراط کا ہیرا چاہیے، اس پر عنبر نے کہا کہ میں نے پوچھا تھا کہ 5 قیراط کا منگوا لوں جس پر اس نے حامی بھر لی ہے۔

دوسری جانب ملک ریاض نے اپنی آڈیو کی تردید کر دی ہے۔ ایک بیان میں انھوں نےکہا کہ ڈیپ فیک جیسی ٹیکنالوجی کی مدد سے ایسی آڈیو گفتگو مصنوعی طور پر تیار کرنے پر حیرت نہیں ہونی چاہیے۔ ملک ریاض نے کہا کہ میں کسی پارٹی کی مہم کا حصہ بننا نہیں چاہتا، ذاتی دشمنی کے لیے میری آڈیو کا استعمال افسوس ناک ہے۔ انکا کہنا تھا کہ وہ اپنے خلاف اس سازش میں ملوث عناصرکی تلاش کے لیے قانونی راستے اختیار کریں گے۔ تاہم راولپنڈی میں موجود باخبر ذرائع کا کہنا ہے کہ ملک ریاض کی لیک ہونے والی آڈیو گفتگو سو فیصد جینوئن ہے اور یہ انہی کے موبائل سے لیک ہوئی ہے۔ ذرائع کا کہنا تھا کہ ملک ریاض کو ہر آنے اور جانے والی کال ریکارڈ کرنے کی عادت ہے اور آصف زرداری والی آڈیو بھی انہی کے موبائل سے لیک ہوئی تھی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ اگر ملک ریاض اپنی لیک ہونے والی گفتگو کو جینوئن تسلیم کرنے کے لئے تیار نہیں تو اس کا فرانزک بھی کروایا جا سکتا ہے۔

Related Articles

Back to top button