مسلم لیگ ن کے اراکین نے سرکاری رہائش گاہیں خالی کرنا شروع کر دیں

ممکنہ شکست کے پیش نظر مسلم لیگ ن کے اراکین نے سرکاری رہائش گاہیں خالی کرنا شروع کر دی ہیں، لیگی اراکین نے وزیراعلیٰ کے الیکشن سے قبل ہی شکست کو قبول کر لیا ہے۔
22 جولائی کو شیڈول پولنگ سے قبل ہی اپنی جماعت کی ممکنہ شکست کو دیکھتے ہوئے مسلم لیگ ن سے تعلق رکھنے والے متعدد وزراء نے سرکاری رہائش گاہیں خالی کرنا شروع کر دی ہیں۔وزراء کی جانب سے اپنے سرکاری دفاتر سے بھی سامان اٹھایا جا رہا ہے، الیکشن میں دھاندلی کا خدشہ، پی ٹی آئی اور ق لیگ نے بڑا قدم اُٹھا لیا
ذرائع ن لیگ نے اعتراف کیا کہ پی ٹی آئی اراکین اسمبلی کو پرویز الہٰی کو ووٹ نہ دینے کیلئے راضی کرنے کی کوششیں کی گئیں تاہم پرویز الہٰی کا راستہ روکنے کی کوششیں کامیاب نہ ہو سکیں جبکہ پی ٹی آئی اور مسلم لیگ ق کے اراکین نے وزیراعلیٰ پنجاب کیلئے 186 ارکان پورے ہونے کا دعویٰ کیا۔
یاد رہے کہ وزیراعلیٰ کو منتخب کرنے کے لیے آج 22 جولائی کو انتخاب ہونا ہے، جس کے لیے مسلم لیگ ن اور اتحادی جماعتوں نے اپنے اراکین کو ہوٹل میں قیام کروایا ہے۔

Related Articles

Back to top button