وی آئی پیز، سینئر بیوروکریٹس کے سیکیورٹی پروٹوکول میں کمی

حکومت نے وفاقی کابینہ کے فیصلے کے مطابق وی آئی پیز اور سینئر بیوروکریٹس کے لیے سیکیورٹی پروٹوکول کو کم کردیا۔

پولیس کے ذرائع نے بتایا کہ ان وی آئی پیز کے لیے سیکیورٹی برقرار رکھی جائے گی جنہیں سیکیورٹی کا کوئی خطرہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ اب تک اعلیٰ عدالتوں کے ججز کی سیکیورٹی کم کرنے کے حوالے سے فیصلہ نہیں کیا گیا ہے۔

وی آئی پیز میں وفاقی وزرا، مشیر، سینیٹ، اسپیکر و ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی اور اعلیٰ عدالتوں کے ججز شامل ہیں جبکہ سینئر بیوروکریٹس میں وزارتوں کے سیکریٹریز شامل ہیں۔

ذرائع نے کہا کہ ’ان وی آئی پیز کو مقامی پولیس اہلکار تعینات کرکے تحفظ فراہم کرتی ہے جبکہ چند وی آئی پیز کی سیکیورٹی کے لیے رینجرز اہلکار بھی تعینات کیے جاتے ہیں‘۔

ان کا کہنا تھا کہ وی آئی پیز اور سینئر بیوروکریٹس کی سیکیورٹی پر مامور اہلکاروں کی تعداد کم کرکے بلیو بک میں درج مجوزہ تعداد کے مطابق کردی گئی ہے۔

بلیو بک کے مطابق ہر وی آئی پی صرف دو پولیس اہلکار رکھنے کا مجاز ہے، چاہے وہ ان کے گھروں پر ڈیوٹی دیں یا وی آئی پی شخص کے ساتھ سفر کریں۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ اس وقت بیشتر وی آئی پیز اور سینئر بیوروکریٹس کے ساتھ متعین سیکیورٹی اہلکاروں سے زیادہ موجود ہیں۔

ذرائع نے کہا کہ قبل ازیں کابینہ ڈویژن نے وی آئی پیز سے مجوزہ تعداد سے زائد سیکیورٹی اہلکار واپس لینے کا فیصلہ کیا تھا اور وزارت داخلہ کو اس پر عملدرآمد کی ہدایت کی تھی۔

اس ہدایت پر ردعمل میں وزارت نے انسپکٹر جنرل اسلام آباد پولیس کو حکم پر اس کی روح کے مطابق عملدرآمد کا حکم دیا،

سیکیورٹی ڈویژن کے سینئر سپرنٹنڈنٹ پولیس ڈاکٹر خرم رشید نے ڈان کو بتایا کہ وی آئی پیز کی سیکیورٹی کو کابینہ کے فیصلے کے مطابق بنایا جائے گا۔

Related Articles

Back to top button