فیس بک پاکستانیوں کیلئے پیسے کمانے کا فیچر لے آیا

دنیا کے سب سے بڑے سوشل میڈیا پلیٹ فارم ’’فیس بک‘‘ نے ’’کانٹینٹ کریئیٹرز‘‘ کا فیچر تمام صارفین کیلئے عام کر دیا ہے جس کی مدد سے اب پاکستانی صارفین بھی پیسے کما سکیں گے، یاد رہے کہ یوٹیوب کے برعکس فیس بک پر پاکستانی صارفین کے پاس پیسے کمانے کی آپشن موجود نہیں تھی۔ ابتدائی طور پر ’’فیس بک سٹارز‘‘ کو امریکا اور بعد ازاں یورپی ممالک میں پیش کیا گیا تھا لیکن اس کے بعد پاکستان سمیت کئی ممالک میں اسے متعارف کرانے کا اعلان کیا گیا تھا۔

پاکستان میں ’پروفیشنل موڈ‘ متعارف کروانے کے بعد ’فیس بک اسٹارز‘ کے فیچرز کو بھی عام کردیا گیا ہے، جس کے ذریعے عام لوگ بھی پیسے کما سکتے ہیں، فیس بک سٹارز دراصل ایک ڈیجیٹل کرنسی ہے جو صارفین کی رِیلز، مختصر ویڈیوز اور پوسٹس پر از خود نظر آنے لگیں گے۔ سٹارز نظر آنے پر دوسرے صارفین انہیں پیسوں کے عوض خریدیں گے اور بعد ازاں وہ اپنی مرضی سے کسی بھی کانٹینٹ کریئیٹر کی ریلز یا پوسٹ پر نظر آنے والے سٹار کے آئیکون پر کلک کر کے کانٹینٹ کریئیٹر کو دیں گے۔صارف کی جانب سے کانٹینٹ کریئیٹر کو سٹارز دیے جانے کے بعد فیس بک ہر سٹار کے عوض تخلیق کار کو ڈالر کا چوتھائی حصہ ادا کرے گا، یعنی پاکستانی 50 سے 70 روپے ملیں گے۔

 

یاد رہے کہ سٹارز کے لیے تمام فیس بک اکاؤنٹ ہولڈرز اہل نہیں ہوتے، تاہم جنکے فالوورز 6 ہزار سے زائد ہوں گے اور وہ متحرک ہوں گے تو وہ اس فیچر کے اہل ہوں گے۔ اگرچہ 6 ہزار فالوورز کے ساتھ بھی کوئی بھی شخص سٹارز فیچر کے لیے اہل ہوجائے گا، تاہم فیس بک کے ازخود فیچر کے تحت اس کی کئی ویڈیوز اور پوسٹس پر سٹار نظر نہ آنے کا امکان موجود ہے۔ اس فیچر کے تحت فیس بک بظاہر ان کانٹینٹ کریئیٹرز کو ذیادہ سٹارز دے گا جو کہ ٹک ٹاک کی طرح تخلیقی ویڈیوز بناتے ہوں گے، فیس بک سٹارز کے لیے پاکستان اہل ممالک میں شامل ہے اور یہاں کے صارفین اس کے لیے اپلائی کر سکتے ہیں۔ ایسا کرنے کے لیے صارفین کو سب سے پہلے اپنا اکاؤنٹ ’پروفیشنل موڈ‘ میں تبدیل کرنا پڑے گا جس کے لیے صارف اپنے پروفائل پر ایڈٹ سیٹنگ کے ساتھ بنے تھری ڈاٹ مینیو میں جاکر اپنے پروفائل کو پروفیشنل میں تبدیل کر سکتے ہیں۔ اسی طرح صارفین جب چاہیں اپنے اکاؤنٹ کو واپس پہلے کی طرح عام پروفائل میں تبدیل کر سکتے ہیں۔

پروفیشنل موڈ میں تبدیل ہونے کے بعد ’ویو ٹولز‘ میں جاکر سٹارز کے فیچر کو آن کیا جا سکتا ہے، سٹارز فیچر کو آن کرنے کے لیے صارف کو اپنے گھر یا دفتر کا ایڈریس، فون نمبر، ٹیکس نمبر، ای میل ایڈریس اور دوسری معلومات بھی دینا ہوگی اور اسے ایک آن لائن فارم پر رضامندی کے دستخط بھی کرنا پڑیں گے۔

صارف کو اپنا آئی بی این اکاؤنٹ نمبر بھی فراہم کرنا پڑے گا، جس کے بعد صارف کے اکاؤنٹ پر اسٹار فیچر آن ہوجائے گا اور اسے اس کا نوٹی فکیشن بھی موصول ہوجائے گا۔ سٹارز فیچر کے تحت فیس بک خود سے کسی کانٹینٹ کریئیٹرز کو پیسے فراہم نہیں کرے گا۔ یعنی جس طرح یوٹیوب پر ویڈیوز دیکھنے سے پیسے کمائے جا سکتے ہیں، فیس بک پر فی الحال سٹارز کی صورت میں ایسے پیسے نہیں کمائے جا سکتے تاہم خیال کیا جا رہا ہے کہ فیس بک  آگے چل کر ویوز، لائیکس اور شیئرز کے حساب سے تخلیق کاروں کو پیسے فراہم کرے گا، تاہم اس حوالے سے کچھ بھی کہنا قبل از وقت ہے۔

Related Articles

Back to top button