اسرائیلی ایجنٹ پر فلم بنانے پر مارول سٹوڈیو کی ٹرولنگ

معروف ویب سیریز ’’مس مارول‘‘ بناکر پذیرائی حاصل کرنے والا ’’مارول‘‘ سٹوڈیو اسرائیلی ایجنٹ کے کردار پر فلم بنانے کے اعلان پر تنقید کی زد میں آ گیا ہے۔ حال ہی میں پہلی مسلم و پاکستانی سپر ہیرو ویب سیریز ’’مس مارول‘‘ بنانے والے سٹوڈیو ’’مارول‘‘ کو فلسطین مخالف سپر ہیرو لڑکی کو آنے والی فلم کا حصہ بنانے پر شدید تنقید کا سامنا ہے، اسرائیلی ویب سائٹ ’’ہارتز‘‘ کے مطابق مارول سٹوڈیو نے حال ہی میں تصدیق کی تھی کہ آنے والی سپر ہیرو فلم ’’کیپٹن امریکا نیو ورلڈ آرڈر‘‘ میں فلسطین مخالف سپر ہیرو لڑکی کے کردار کو بھی شامل کیا جائے گا۔
فلم سٹوڈیو کے مطابق 2024 میں ریلیز ہونے والی فلم ’’کیپٹن امریکا نیو ورلڈ آرڈر‘‘ میں فلسطین مخالف اسرائیلی ایجنسی موساد کی ایجنٹ کا کردار ادا کرنے والی سپر ہیرو لڑکی ’صابرا‘ کو بھی شامل کیا جائے گا۔
’’صابرا‘‘ فلم میں موساد کی ایجنٹ بنیں گی جوکہ فلم میں ہُلک نامی کردار کے ننھے 6 سالہ دوست کی موت کے بعد تحقیق کر کے ثابت کریں گی کہ بچہ اسرائیلی بمباری نہیں بلکہ فلسطینی انتہا پسندوں کی بمباری میں مارا گیا۔ فلم کی کہانی کے مطابق ہُلک اپنے ننھے دوست سے ملنے تل ابیب پہنچتے ہیں مگر وہاں ان کا دوست ایک بمباری میں مارا جاتا ہے، جس کا ابتدائی الزام اسرائیل پر لگتا ہے، تاہم صابرا نامی کردار تحقیق کر کے ثابت کرتا ہے کہ بچہ فلسطینی انتہا پسندوں کی بمباری سے مارا گیا۔
فلسطین مخالف اور اسرائیلی حمایتی کردار کو سپر ہیرو فلم کا حصہ بنائے جانے پر مارول سٹوڈیو کو دنیا بھر کے شائقین نے سخت تنقید کا نشانہ بنایا اور فلم سٹوڈیو کے فیصلے کو انتہائی غیرنذمہ دارانہ قرار دیا، ابتدائی طور پر مارول سٹوڈیو پر فلسطینی افراد نے تنقید شروع کی، جس کے بعد دنیا بھر کے عرب شائقین اور بعد ازاں دیگر خطوں کے لوگوں نے بھی مارول سٹوڈیو کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

آئمہ بیگ اور شہباز شگری کی لو سٹوری کا اختتام ہوگیا

اسی حوالے سے ’’عرب نیوز‘‘ نے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ اگرچہ ’’صابرا‘‘ کا لفظ اسرائیل میں بھی عام استعمال کیا جاتا ہے، تاہم یہ نام فلسطین میں موجود ایک بستی کا بھی نام ہے، جہاں 1982 میں اسرائیلی فوج کی حمایت یافتہ ایک دہشت گرد تنظیم نے نہتے فلسطینیوں کا قتل عام کیا تھا۔
رپورٹ میں بتایا گیا کہ قابض اسرائیلی فوج کی حمایت یافتہ دہشت گرد تنظیم نے 1982 میں فلسطین میں موجود صابرا اور شاتیلا بستیوں میں قتل عام کے ذریعے درجنوں افراد کو قتل کیا، اس کے متعلق بتایا جاتا ہے کہ صابرا اور شاتیلا قتل عام میں 400 سے 3500 تک معصوم فلسطینیوں کو قتل کیا گیا تھا۔ مارول سٹوڈیو کی جانب سے متنازع نام اور فلسطین مخالف ہیروئن کو فلم کا حصہ بنانے پر لوگوں نے سٹوڈیو پر سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے صابرا کے کردار کو ’’کیپٹن امریکا نیو ورلڈ آرڈر‘‘ کا حصہ نہ بنانے کا مطالبہ بھی کیا، خیال رہے کہ فلم میں ’’صابرا‘‘ نامی فلسطین مخالف سپر ہیرو لڑکی کا کردار اسرائیلی اداکار ’’شرا ہاس‘‘ ادا کریں گی۔

Related Articles

Back to top button