موت کی درست پیشگوئی کرنے والا مصنوعی ذہانت کا ٹول تیار

موجودہ دور میں اے آئی ٹیکنالوجی کی خوب دھوم ہے، ہر کوئی اس کے خفیہ فیچرز سے فائدہ اٹھانے کیلئے بے تاب ہے، حال ہی میں ایک نئے فیچر کا بھی انکشاف ہوا ہے جس سے موت کی 78 فیصد درست پیشگوئی ممکن ہو سکتی ہے، اب یہ جاننا بھی ممکن ہو گیا ہے کہ کسی انسان کی موت کب واقع ہوگی۔ یہ دعویٰ ڈنمارک کے پروفیسرسیون لیہمین نے کیا ہے۔
ٹیکنیکل یونیورسٹی کے ماہر کا کہنا ہے کہ چیٹ جی پی ٹی سے ملتا جلتا مصنوعی ذہانت کے ذریعے کام کرنے والا یہ ٹول بتا سکے گا کہ کوئی بھی انسان کب تک جیئے گا، یہ ٹول 78 فیصد درستگی کے ساتھ موت کی پیش گوئی کرسکتا ہے، تفریحی مقاصد کے لیے بنائے جانے کے باعث اس کے تجزیے کو حتمی یا قطعی قرار نہیں دیا جا سکتا۔
مصنوعی ذہانت کا حامل life2vec نامی یہ آن لائن ٹول کسی بھی انسان کی زندگی کے مختلف پہلوئوں کا جائزہ لے کر اندازہ لگا سکتا ہے کہ وہ کب تک جی سکے گا۔ 2008 سے 2020 تک اس ٹول کو کم و بیش 60 لاکھ افراد پر آزمایا گیا اور اس نے 75 فیصد درستی کے ساتھ بتایا کہ کون کون کب تک زندہ رہ پائے گا۔
نیو یارک پوسٹ کی خبر کے مطابق محققین کی ٹیم کو امید ہے کہ کسی بھی شخص کی پرائیویسی کو مجروح کیے بغیر آن لائن کام کرنے والا یہ ٹول عمر کی طوالت کے حوالے سے کلیدی کردار ادا کرنے والے عوامل کی نشاندہی کرسکے گا، دلچسپ بات یہ ہے کہ بیشتر افراد یہ نہیں جاننا چاہتے کہ وہ کب تک جی سکیں گے، ممکنہ عرصہ حیات کا اندازہ لگانے کیلئے یہ ٹول آمدنی، پیشے، رہائش اور صحت سے متعلق معلومات کا تجزیہ کرتا ہے۔
چیٹ جی پی ٹی کی ٹیکنالوجی جاب اور فیشن سے متعلق سرچ کی بنیاد پر کام کرتی ہے جبکہ life2vec کی ٹیکنالوجی کسی بھی انسان کی شخصیت اور زندگی کے مختلف پہلوئوں کا جائزہ لے کر شخصی اوصاف، صحت، مزاج اور دیگر امور کے بارے میں رائے دیتی ہے، یہ ٹول اب تک عوام اور کاروباری اداروں کو میسر نہیں۔

Related Articles

Back to top button