فل کورٹ نہ بنا تو عدالتی کارروائی کا بائیکاٹ کریں گے

وفاقی وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ نے کا ہے کہ اگرعدالت عظمیٰ کا فل کورٹ تشکیل نہیں دیا جاتا تو عدالتی کارروائی کا بائیکاٹ کریں گے۔

عدالت عظمیٰ کے باہر وزیر قانون اعظم نذیر تارڑ کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے رانا ثنا اللہ نے کا ہماری اتحادی جماعتوں کا متفقہ فیصلہ ہے کہ اگر فل بنچ تشکیل نہیں دیا جاتا تو ہم عدالتی کارروائی کا بائیکاٹ کریں گے، تمام سیاسی جماعتوں نے معزز عدالت عظمی سے استدعا کی ہے کہ وزیر اعلی پنجاب کے انتخاب کے معاملے پر فل کورٹ تشکیل دیا جائے ،اس سے عدالت کی عزت میں اضافہ ہوگا۔

انکا کہنا تھا ہماری استدعا ہے کہ نظرثانی پٹیشن اور متعلقہ پٹیشن سب کو اکٹھا سنا جائے، الیکشن کمیشن نے 25 ارکان کو پارٹی ہیڈ عمران خان کی ہدایات نہ ماننے پر ڈی سیٹ کیا تھا۔

اس موقع پر اعظم نذیر تارڑ کا کہنا تھا سپریم کورٹ بار کے صدور آج پیش ہوئے اور کہا کہ یہ اہم نکات ہیں ، اس سے سپریم کورٹ کی عزت میں اضافہ ہوگا، اگر فیصلہ ہوا کہ ڈالا گیا ووٹ گنا جائے گا تو ہم منظور کر کے جائیں گے۔

اعظم نذیر تارڑ نے کہا نواز شریف کو سزا سنائی گئی تو اس فیصلے کے خلاف پٹیشن دائر کی گئی تھی، فل کورٹ نے 2015 میں کہا یہ پارٹی ہیڈ کا اختیار ہے، بینچ میں شامل 5 جج صاحبان نے کہا پارٹی میں سب سے مضبوط عہدہ پارٹی سربراہ کا ہوتا ہے، آئین کی ایسی تشریح کر دی گئی ہے جو سمجھ سے بالا تر ہے۔

Related Articles

Back to top button