نعیم بخاری عمران خان کو جیل میں ہی کیوں دیکھنا چاہتے ھیں؟

پاکستان تحریک انصاف کے بانی چیئرمین عمران خان کے قریبی مشیر سمجھے جانے والے سینئر قانون دان نعیم بخاری نے کہا ھے کہ عمران خان جیل میں ہے انہیں ابھی جیل میں ہی رہنا چاہئے،انہیں اس عمل سے گزرنا چاہیے۔ نجی ٹی وی کو دئیے گئے ایک انٹرویو میں نعیم بخاری کا کہنا تھا کہ اگر میں عمران خان کی کابینہ میں ہوتا تو سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کی گھڑی بیچنے سے منع کرتا۔القادر ٹرسٹ میں جب ٹرسٹی بدلے گئے تو میں کہتا تھا یہ نہ کریں۔ کیا بانی پی ٹی آئی کو بابر اعوان کے بیک گراؤنڈ کا نہیں پتہ تھا؟ میں نے اس وقت بانی پی ٹی آئی کو مشورہ دیا تھا کہ وہ بابر اعوان اور فواد چوہدری سے بچ کر رہیں ۔ آج عمران کی کابینہ کے لوگ کہتے ہیں ہمیں القادر ٹرسٹ والا خط دکھایا نہیں گیا تو وہ اس وقت ہی اٹھ کر کھڑے ہو جاتے۔ وزرا میں اتنی جرات نہیں تھی کہ پوچھتے کس چیز پر دستخط کرا رہے ہیں ۔ نعیم بخاری کے مطابق وزارت عظمیٰ کے آخری دن مجھے بانی پی ٹی آئی نے کہا کہ سپریم کورٹ میں کیا ہو رہا ہے جس پر میں نے ان سے کہا کہ اپنے اٹارنی جنرل سے پوچھیں اور اٹارنی جنرل نے کہا کہ وہ ڈپٹی اسپیکر کے فیصلے کا دفاع نہیں کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ وزرا کے سامنے مجھ سے بانی پی ٹی آئی نے پوچھا کہ اب کیا کرنا چاہیے تو میں نے کہا تھا کہ آپ دائیں بیٹھے تھے، اب بائیں بیٹھ جائیں لیکن اسمبلی سے نہ نکلیں۔ میں نے انہیں پنجاب اور کے پی کی اسمبلیاں نہ توڑنے کا بھی مشورہ دیا تھا اور کہا تھا کہ یہ آپ کی محفوظ جگہیں ہیں۔ نعیم بخاری نے یہ بھی کہا کہ بانی پی ٹی آئی نے مجھے عہدے کی پیشکش کی تھی جس پر میں نے ان سے کہا تھا کہ میرے لئے چیف آف سٹاف کا نیا عہدہ بنانا پڑے گا۔ جو افسران چنے گا اور ہر فائل اس سے ہو کر وزیراعظم تک جائے گی ۔ 8 فروری کو ہونے والے عام انتخابات کے حوالے سے نعیم بخاری نے کہا کہ نواز شریف کو اگر وہم ہے کہ گوالمنڈی میں پہلے کی طرح ووٹ پڑیں گے تو ایسا نہیں ہو گا۔ راجا ریاض ن لیگ سے الیکشن لڑ رہا ہے، دیکھتا ہوں کتنے ووٹ پڑتے ہیں۔ پرویز خٹک بھی جیت کر دکھائے جب کہ آئی پی پی کا چانس صفر ہے
معروف قانون دان نے اپنے انٹرویو میں مسلم لیگ ن کے قائد اور سابق وزیراعظم کے حوالے سے کہا کہ نواز شریف کے خلاف پاناما کیس 100 فیصد درست تھا۔ انہوں نے دو بار بتایا کہ پیسے کہاں سے آئے اور دونوں بار ہی جھوٹ بولا، عدالت میں قطری خط پیش کر دیا۔پانامہ کیس میں استغاثہ کے وکیل نے کہا کہ اس کیس میں جے آئی ٹی کی رپورٹ بڑی واضح تھی۔ وقت آئے گا کہ پاناما کیس وہیں پر ہو گا۔ پاکستان میں سب کچھ ہو سکتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پاناما کیس میں ایک پائی نہیں لی بلکہ اخراجات بھی خود کرتا تھا۔ نعیم بخاری نے کہا کہ ایک شادی کی تقریب میں آتمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کو بتا دیا تھا کہ رانا ثناء اللہ کے خلاف ہیروئن کا کیس غلط ھے اور یہ کیس جیتا بھی نہیں جاسکتا

Related Articles

Back to top button