سیلاب:چین ،ترکیہ اور دیگر ممالک سے امدادی سامان پہنچنا شروع ہوگیا

پاکستان کے کروڑوں سیلاب زدگان کی امداد اور بحالی کیلئے امریکہ، چین، کینیڈا، ترکیہ اور آسٹریلیا سے بڑے پیمانے پرامدادی سامان پہنچنا شروع ہو گیا ہے۔

امریکہ کی جانب سے یو ایس ایڈ کے ذریعے پاکستان میں شدید سیلاب سے متاثرہ لوگوں اور کمیونٹیز کی مدد کے لیے جان بچانے والی انسانی امداد کے لیے 30 ملین ڈالر کی اضافی امداد کا اعلان کیا گیا ہے،امریکہ نے فوری طور پر درکار انسانی امداد کے لیے 30 ملین ڈالر کیا اعلان کیا ہے۔

قبل ازیں واشنگٹن نے اس ماہ کے شروع میں 1.1 ملین ڈالر سے زیادہ کی گرانٹ اور پروجیکٹ سپورٹ بھی فراہم کی تھی تاکہ سب سے زیادہ متاثرہ کمیونٹیز تک براہ راست امداد کی رسائی کو یقینی بنایا جا سکے اور مستقبل کے سیلاب کے اثرات کو کم کرنے اور روکنے میں مدد کی جا سکے، امریکا کی طرف سے ماتحت ایجنسی کے ذریعے بھیجی گئی یہ امداد انسانی زندگیوں کو بچائے میں کارگر ثابت ہوگی اور سب سے زیادہ کمزور متاثرہ کمیونٹیز میں مصائب کو کم کرے گی، امریکا مقامی شراکت داروں اور پاکستانی حکام کے ساتھ قریبی روابط سے بحران کی نگرانی جاری رکھے گا، یو ایس ایڈ ڈزاسٹر مینجمنٹ کے ماہر سیلاب کے اثرات کی اسسمنٹ کرنے اور اس پر فوری ریسپانس دینے کے لیے شراکت داروں سے تعان تیز کرنے کے لیے 29 اگست کو پاکستان پہنچے ہیں۔

پاکستان میں امریکی سفارت خانے کی ایک پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ امریکا کو پاکستان بھر میں زندگیوں، ذریعہ معاش اور گھروں کے تباہ کن نقصان پر بہت افسوس ہے، پاکستانی حکومت کی طرف سے مدد کی درخواست کے جواب میں امریکا فوری طور پر درکار خوراک، پانی، صفائی ستھرائی اور حفظان صحت میں بہتری، مالی مدد، اور خیموں کی رسائی کی امداد کو ترجیح دے گا۔

لیبیا میں مسلح گروپوں کےمابین جھڑپوں میں 32 افراد ہلاک ہوگئے

دوسری جانب چینی صدر شی جن پنگ اور وزیر اعظم لی کی چیانگ نے پاکستان میں سیلاب کی تباہی پر صدر مملکت عارف علوی اور وزیر اعظم شہباز شریف کو الگ الگ پیغامات کے ذریعے یکجہتی اور سیلاب سے متاثرہ افراد کے لیے بھرپور تعاون کی پیشکش کی ہے۔

دفتر خارجہ سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق چین کی طرف سے پاکستان میں سیلاب سے متاثرہ افراد کی امداد و بحالی کے لیے 10 کروڑ آر ایم بی کے ساتھ ساتھ 25 ہزار خیمے اور دیگر امدادی سامان فراہم کرنے کی پیشکش کی گئی ہے، ہمارے قریبی اور مضبوط ساتھی چین کی طرف سے سیلاب متاثرین کے لیے بھیجے گئے امدادی سامان کی دو پروازیں جناح انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر پہنچ چکی ہیں، چینی ایئر فورس کی طرف سے 3 ہزار خیموں کی پہلی کھیپ آج اور کل پہنچے گی۔

بیان کے مطابق چین سے آنے والے امدادی سامان کی کھیپ آج وفاقی وزیر خرم دستگیر اور صوبائی وزیر سعید غنی، پاکستان میں چینی سفیر نونگ رونگ کے ساتھ ساتھ اور دیگر پاکستانی حکام کی طرف سے موصول کی گئی۔ بیان میں کہا گیاکہ ہم اس مصبیت کے وقت میں چین کی بروقت اور اہم مدد پر ان کے مشکور ہیں۔

دوست ملک چین کی طرف سے سیلاب کے باعث مشکل حالات میں متاثرین کی بحالی و مدد کے لیے امدادی سامان بھیجنے پر وزیر اعظم شہباز شریف نے چینی صدر شی جن پنگ اور وزیر اعظم لی کی چیانگ کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ یہ سیلاب اپنی شدت اور پھیلاؤ کے لحاظ سے کسی اور جیسا نہیں، چین مشکل ترین وقت میں ہمارے ساتھ رہا ہے اور ہم اس کی حمایت و مدد کی بہت قدر کرتے ہیں۔

ادھرترکیہ سے پاکستان میں سیلاب متاثرین کے لیے آنے والی امداد پر وزیر اعظم شہباز شریف نے ترکی کے صدر رجب طیب اردوان کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ اپنے عہد کی تکمیل کرتے ہوئے میرے بھائی عزت ماب رجب طیب اردوان سیلاب متاثرین کی مدد کے لیے انسانی مدد کی سربراہی کر رہے ہیں۔وزیر اعظم شہباز نے ٹوئٹر پرجاری پیغام میں کہا کہ ترکیہ نے بڑے پیمانے پر امدادی سامان بھیجنے کی سرگرمیاں کی ہیں،ترکیہ سے ابھی تک امدادی سامان کی 6 پروازیں پہنچ چکی ہیں جبکہ مزید کل پہنچیں گی، انقرہ سے امدادی سامان لانے والی ٹرین بھی پاکستان کے لیے نکل چکی ہے۔

دوسری جانب کینیڈا نے پاکستان میں سیلاب سے متاثرہ افراد کی امداد کے لیے 50 لاکھ ڈالر کی امداد کا اعلان کیا ہے۔ کینیڈین وزیر برائے عالمی ترقی ہرجیت سجن نے اوٹاوا میں امداد کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ کینیڈا کی مدد سے شدید متاثرہ لوگوں کے لیے خوراک اور نقد رقم سمیت ہنگامی امداد فراہم کرنے کے اقدامات میں مدد ملے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ فنڈنگ گراؤنڈ پر موجود قابل اعتبار اور تجربہ کار پارٹنرز کے کام کو مزید آگے بڑھائے گی، اس فنڈنگ سے کینیڈا پاکستان کے لیے انسانی امداد کا اعلان کرنے والا پہلا ملک بن گیا تھا۔

ایک بیان میں کینیڈین وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے کہا کہ کینیڈا خوراک، صاف پانی اور دیگر ضروری خدمات فراہم کرنے کے لیے مدد جاری رکھے گا۔ یہ فنڈنگ کینیڈا کی اس قبل اعلان کردہ امداد کے علاوہ ہے جو ایمرجنسی ڈیزاسٹر اسسٹنس فنڈ اور اقوام متحدہ کے مرکزی ایمرجنسی رسپانس فنڈ میں اس کے تعاون کے ذریعے فراہم کی گئی ہے، کینیڈا سیلاب کے اثرات سے نمٹنے کے لیے پاکستانی عوام کے ساتھ کھڑا ہے، کینیڈا صورتحال کو قریب سے مانیٹر کر رہا ہے تاکہ ہنگامی میں مدد کو یقینی بنایا جاسکے۔

ادھر آسٹریلوی حکومت نے بھی اعلان کیا ہے کہ وہ پاکستان میں تباہ کن سیلاب سے متاثرہ افراد کی مدد کے لیے فوری طور پر 20 لاکھ ڈالر فراہم کرے گی، اعلان میں کہا گیا ہے کہ آسٹریلیا کی مدد ورلڈ فوڈ پروگرام کے ذریعے فراہم کی جائے گی،یہ امداد پاکستانی حکومت اور اس کے لوگوں کی فوری انسانی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے فراہم کی جائے گی۔

Related Articles

Back to top button