بلوچستان: بلدیاتی انتخابات میں آزاد امیدواروں کی برتری

بلوچستان کے 32 اضلاع کے بلدیاتی انتخابات کے غیر سرکاری نتائج میں آزاد امیداروں کی برتری برقرار ہے، ووٹنگ کے دوران ہنگامہ آرائی کے چند واقعات میں ایک شخص جاں بحق جبکہ 30 زخمی ہوئے۔
رات گئے موصول ہونے والے غیر سرکاری نتائج میں میونسپل کارپوریشن، میونسپل کمیٹی اور یونین کونسلز کی ایک ہزار نشستوں پر آزاد امیدواروں کی برتری برقرار ہے، صوبے میں جمیعت علمائے اسلام (جے یو آئی ایف) دوسرے نمبر پر ہے اور 100 نشستیں حاصل کرنے میں کامیاب ہوئی ہے جبکہ برسرِ اقتدار بلوچستان عوامی پارٹی (بی اے پی) 71 نشستیں حاصل کر سکی ہے۔
غیر سرکاری نتائج کے مطابق پشتونخوا ملی عوامی پارٹی نے 39 نشستیں، نیشنل پارٹی نے 33، پاکستان پیپلز پارٹی نے 26 اور بلوچستان نیشنل پارٹی مینگل نے 18 سیٹیں حاصل کی ہیں۔گزشتہ روز بلوچستان کے 32 اضلاع کے 4 ہزار 456 شہری و دیہی وارڈز میں بلدیاتی انتخابات کی پولنگ ہوئی جو شام 5 بجے اختتام پذیر ہوئی اس دوران صوبے کے مختلف حصوں میں تشدد و ہنگامہ آرائی کی رپورٹس بھی موصول ہوتی رہی۔
صوبے کے مختلف علاقوں میں حریف گروپوں کے درمیان تصادم، فائرنگ اور گرینیڈ حملے کے نیتجے میں ایک شخص ہلاک جبکہ 30 سےزائد زخمی ہوئے، کچھ اسٹیشنز پر پولنگ کا عمل معطل کردیا گیا۔بلدیاتی انتخابات کی پولنگ کا آغاز 8 بجے ہوا اور 5 بجے تک بلا تعطل جاری رہا جبکہ ووٹوں کی گنتی رات گئے تک جاری رہی۔مکران کے ماہی گیروں اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کے حقوق کے لیے لڑنے والی گوادر حقوق تحریک نے ساحلی ضلع گوادر میں کلین سوئپ کیا جب کہ نیشنل پارٹی نے تربت شہر میں 29 نشستیں جیت کر بھرپور کارکردگی دکھائی۔
بی این پی-ایم، نیشنل پارٹی، جے یو آئی-ایف اور پاکستان نیشنل پارٹی (پی این پی) پر مشتمل 4 جماعتی اتحاد ساحلی ضلع میں حمایت حاصل نہیں کر سکا۔غیر سرکاری نتائج سے ظاہر ہوتا ہے کہ گوادر حق دو تحریک نے میونسپل کمیٹی کی 30 نشستوں میں سے 27 پر کامیابی حاصل کی ہے، تحریک نے اوڑمارا اور پسنی میں بھی بھر پور کارکردگی کا مظاہرہ کیا جہاں ووٹرز بالخصوص خواتین نے ان دو میونسپل کمیٹیوں میں اکثریت حاصل کرنے میں مدد کی۔
دوسری جانب تربت میونسپل کارپوریشن میں ڈاکٹر مالک بلوچ کی سربراہی میں نیشنل پارٹی نے اکثریت حاصل کر لی۔غیر سرکاری نتائج کے مطابق، پارٹی نے 52 میں سے 29 نشستیں حاصل کیں، یہاں پی این پی اور بی این پی-مینگل کو بالترتیب 5 اور 3 نشستیں مل سکیں جبکہ آزاد امیدواروں نے بھی کامیابی حاصل کی۔حکمران بی اے پی کا ٹکٹ اس کے گڑھ ضلع چاغی میں بلدیاتی انتخابات میں نظر نہیں آ سکا کیونکہ سینیٹ کے چیئرمین صادق سنجرانی کے گروپ اور ایم این اے میر محمد عارف محمد حسنی کے حامیوں نے کئی یونین کونسلوں میں ایک دوسرے کے خلاف آزاد امیدوار کے طور پر الیکشن لڑا۔

مکہ مکرمہ میں بغیر اجازت داخلے پر پابندی عائد

سنجرانی گروپ کے حامیوں نے خان سنجرانی پینل کی چھتری تلے الیکشن لڑنے کے لیے بکرے کا انتخاب کیا اور حسنی گروپ نے الفتح پینل کی چھتری تلے الیکشن لڑنے والوں نے اپنا انتخابی نشان خرگوش کے طور پر منتخب کیا۔غیر سرکاری نتائج کے مطابق الفتح پینل نے کم از کم 6 یونین کونسلوں میں جنرل کونسلر کی اکثریت حاصل کی جبکہ سنجرانی پینل نے کم از کم تین یونین کونسلوں میں اکثریت حاصل کی۔جے یو آئی-ایف کا حصہ ایک اور سیاسی اتحاد بابائے چاغی پینل نے میونسپل کمیٹی دالبندین میں 8 میں سے 5 نشستیں جیتنے کے علاوہ یونین کونسلوں میں کم از کم 3 نشستیں پر اکثریت حاصل کی۔
ذرائع نے بتایا کہ مرکزی اور مقامی سطح پر بی اے پی میں اختلافات نے دونوں گروپوں کو اپنے مقامی سیاسی پلیٹ فارم کے تحت بلدیاتی انتخابات لڑنے پر مجبور کیا۔صوبے کے 32 اضلاع کے 6ہزار 259 وارڈز پر 23ہزار 835 امیدواروں نے انتخابات میں حصہ لیا، تاہم ایک ہزار584 امیدوار پہلے ہی جنرل نشستوں پر بلامقابلہ منتخب ہوچکے تھے اور بقیہ 4 ہزار 456 وارڈز پر پولنگ کرائی گئی۔الیکشن کمیشن آف پاکستان نے صوبے کے 34 میں سے 32 اضلاع میں انتخابات کے لیے 5ہزار 226 پولنگ اسٹیشنز بنائے، جن میں مردوں کے لیے 576، خواتین کے لیے 562 اور 4 ہزار 88 مشترکہ پولنگ اسٹیشنز شامل ہیں۔
باقی دو اضلاع کوئٹہ اور لسبیلہ میں انتخابات کے شیڈول کا اعلان بعد میں کیا جائے گا، کیونکہ صوبائی حکومت کی جانب سے حلقوں کی تعداد میں اضافے کے بعد وہاں حلقہ بندیوں کا عمل جاری ہے۔بلوچستان کے چیف سیکریٹری عبدالعزیز عقیلی نے کہا کہ انتخابات پرامن، آزادانہ، شفاف اور غیر جانبدارانہ طریقے سے ہوئے۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ووٹر ٹرن آؤٹ 60 فیصد رہا جو 1988 کے انتخابات کے بعد سب سے زیادہ ہے۔

Related Articles

Back to top button