سپریم کورٹ سے تحفظ ملا تو پلانA ،نہ ملا توپلانB ہوگا

تحریک انصاف کے چیئرمین و سابق وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ اور وکلا کو تاریخ معاف نہیں کرے کیونکہ آپ نے قانون کی بالادستی کو قائم کرنا ہے، آپ نے آج اسٹینڈ نہ لیا تو آپ کے بچے آپ معاف نہیں کریں گے، سپریم کورٹ شریف خاندان کے کیسز کی خود نگرانی کرے، مانیٹرنگ جج بنائے، اگر یہ نہیں کرنا بڑے مگرمچھوں اور چوروں ڈاکوؤں کو نہیں پکڑنا تو پھر جیلوں کے دروازے کھول دیں، ظلم نہ کریں غریب چوروں کو بھی رہا کردیں۔

پشاورمیں وکلا کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان کا کہناتھا کل کیس کی سماعت ہے، سپریم کورٹ سے فیصلہ لیں گے کہ پرامن احتجاج کا جمہوری حق ہے یا نہیں، سپریم کورٹ رولنگ دے کہ کس بنیاد پر اور کس قانون کے تحت ہمیں مارچ سے روکا گیا، عدالت یہ بھی بتائے کہ آئندہ جب ہم آئیں گے تو سپریم کورٹ اس طرح کی آمرانہ اور غیر جمہوری اقدام کی اجازت دے گی، میں نے صرف اس لیے دھرنا نہیں دیا کہ ملک میں تباہی مچے گی، انتشار پھیلے گا، پنجاب پولیس اور فوج کے خلاف نفرت پھیلے گی۔

انہوں نے کہا اگر سپریم کورٹ سے ہمیں تحفظ ملا تو ہماری ایک حکمت عملی ہوگی اور اگر تحفظ نہ ملا تو پھر دوسری حکمت عملی ہوگی، ہم رکاوٹیں ہٹانے کی تیاری کرکے جائیں گے، اس بار تو ہم بغیر تیاری گئے تھے کیونکہ سپریم کورٹ کا فیصلہ آیا تھا کہ رستے کھل گئے ہیں، جس کی وجہ سے ہم بغیر تیاری کے پھنس گئے تھے۔

چیئرمین پی ٹی آئی کہا کہ کسی کے ساتھ برے تعلقات نہیں چاہتے، لیکن غلامی بھی نہیں چاہتے،پاکستان میں سب حکومتیں کرپشن کے الزامات کے تحت گئیں، ہماری پہلی حکومت ہے جس پر کرپشن کا کوئی الزام نہیں، جو مراسلہ امریکا سے آیا اس میں واضح طور پر دھمکی دی گئی ہے،ایک سازش کے تحت پی ٹی آئی کی حکومت گرائی گئی، ملک میں پہلی بار ہوا کہ کوئی حکومت گرائی گئی اور لوگ سڑکوں پر نکلے ورنہ پہلے تو مٹھائی بانٹا کرتے تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ میں کسی سے کوئی جنگ نہیں چاہتا، ہم کسی کے ساتھ برے تعلقات نہیں چاہتے، لیکن کسی کی غلامی نہیں چاہتے، میں نے امریکا کو کہا تھا کہ دوستی سب سے کریں گے، امن میں ساتھ ہوں گے لیکن جنگ میں ساتھ نہیں ہوں گے،میرا دور حکومت صرف ساڑھے3سال چلا ہے، 62 سال پاکستان فوجی آمروں اور2 خاندانوں کے ہاتھوں میں چلا ہے، شہباز شریف کو دوبارہ حکومت میں غلامی کے لیے لایا گیا ہے، یہ عوام کیلئے نہیں کسی اور کو خوش کرنے کیلئے فیصلے کرتے ہیں،مرغی کی قیمتیں دگنی ہوگئی ہے جب سے حمزہ شہبازوزیراعلیٰ بنا ہے۔

سابق وزیر اعظم نے کہا الیکشن کرانے سے آپ ڈرتے ہیں،عوام میں آپ نہیں جا سکتے کیونکہ چور اور غدار کے نعرے لگتے ہیں، مدینہ میں چور چور کے نعرے لگائے اس میں ہمارا کیا قصور تھا، اس سے بھی زیادہ اللہ کی کیا لعنت ہوگی کہ مدینہ میں چور چور کے نعرے لگے، ان کا سپریم کورٹ نے سیسیلین مافیا کا نام ٹھیک رکھا ہے، یہ یا تو لوگوں کو خریدلیتا ہے یا مروادیتا ہے، بےنظیر کی انہوں نے تصویریں پھینکی تھیں، ان سے زیادہ غلیظ اور گھٹیا خاندان نہیں ہے۔

اسٹاک مارکیٹ 46ہزار کی سطح عبور کرگئی

چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ اس وقت لاہور ہائیکورٹ میں جورہا ہے وہ غیر آئینی ہے، حمزہ شہباز کی حکومت کو بچانے کی کوشش کی جارہی ہے، جو اکثریت کھو بیٹھا ہے، لوگ الیکشن کمیشن کو دیکھ رہے ہیں، حمزہ شہباز کو ہٹایا جائے، نااہل کیا جائے، شفاف انتخابات کرائے جائیں۔

Related Articles

Back to top button