گوادر کی حق دو تحریک 19ویں روز میں داخل، سی پیک بند کرنے کی دھمکی

گوادر کی حق دو تحریک 19ویں روز میں داخل ہو گئی ہے، مظاہرین نے ایک ہفتے میں مطالبات منظور نہ کیے جانے کی صورت میں چین -پاکستان اقتصادی راہداری کو معطل کرنے کی دھمکی دی۔

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق گوادر میں پرامن بڑے احتجاجی مظاہروں کی قیادت کے بعد قومی سطح پر توجہ کا مرکز بننے والے حق دو تحریک کے سربراہ مولانا ہدایت الرحمٰن نے گزشتہ سال دسمبر میں ایک ماہ کے طویل دھرنے کے بعد صوبائی حکومت کے ساتھ طے ہونے والے معاہدے پر عمل درآمد کے لیے ایک بار پھر گوادر میں دھرنا دے دیا ہے۔

احتجاج ریلی میں شریک بچے تربت، پسنی اور ضلع گوادر کے دیگر علاقوں سے گوادر شہر پہنچے، انہوں نے اپنے مطالبات کے تحریری پلے کارڈز اور بینرز اٹھائے سڑکوں پر مارچ کیا۔انہوں نے گوادر میں غیر قانونی سمندری شکار پر پابندی اور غیر ضروری چوکیوں کو ختم کرنے سمیت دیگر کئی مسائل پر حکومت کی جانب سے کیے گئے معاہدے پر عمل درآمد نہ کرنے پر حکومت اور متعلقہ حکام کے خلاف نعرے لگائے۔

ECPنےعمران پرمقدمہ کیلئے توشہ خانہ ریفرنس ٹرائل کورٹ بھیج دیا

مولانا ہدایت الرحمٰن جماعت اسلامی بلوچستان کے جنرل سیکرٹری بھی ہیں، انہوں نے ریلی سے خطاب کرتے ہوئے حکومت پر کڑی تنقید کی اور کہا کہ مکران کے لوگ گزشتہ 2 ہفتوں سے احتجاج کر رہے ہیں لیکن کوئی بھی حکومتی عہدیدار مذاکرات کے لیے نہیں آیا جس سے حکمرانوں کا غیر سنجیدہ رویہ ظاہر ہوتا ہے۔

انہوں نے خبردار کیا کہ اگر شہریوں کے مطالبات تسلیم نہ کیے گئے اور 20 نومبر تک حق دو تحریک کے ساتھ کیے گئے معاہدے پر عمل نہ کیا گیا تو ایکسپریس وے، گوادر پورٹ اور سی پیک منصوبوں کو بند کردیے جائیں گے۔ جو تحریک انہوں نے شروع کی، اسے اب روکا نہیں کیا جا سکتا اور ریلی میں شریک بچے مستقبل میں اس تحریک کی قیادت کریں گے جب کہ وہ یہ جانتے ہیں کہ حکمران ان کے والدین کے مسائل حل کرنے کے لیے اقدامات نہیں کر رہے۔

مولانا ہدایت الرحمٰن نے کہا کہ صرف سرداروں، نوابوں، جرنیلوں اور ججوں کا پاکستان ہمیں قبول نہیں، اس موقع پر انہوں نے طویل پر امن جدوجہد کے لیے تیار رہنے پر زور دیا۔

Related Articles

Back to top button