نوازشریف وہ آرمی چیف تعینات کریگا جواس کے خیال میں ان کی مدد کریگا

تحریک انصاف کے چیئرمین اور سابق وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے نواز شریف وہ آرمی چیف تعینات کرے گا جو اس کے خیال میں ان کی مدد کرے گا، مجھے گولیاں لگی ہیں، میں ایف آئی آر ہی نہیں کٹوا سکا کیونکہ سامنے طاقت ور کھڑا ہے،اس ملک میں قانون کی حکمرانی نہیں بلکہ طاقتور کی حکمرانی ہے۔

گجرات پہنچنے والےلانگ مارچ کے شرکا سے ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کرتے ہوئے ان کہنا تھا کہ پاکستان میں قانون کی حکمرانی نہیں ہے، یہاں جو طاقت ور ہے، وہ جو مرضی چاہے کر سکتا ہے، جو یہ سارا اعظم سواتی کے کیس میں ہوا، مجھے گولیاں لگی ہیں، میں ایف آئی آر ہی نہیں کٹوا سکا کیونکہ سامنے طاقت ور کھڑا ہے، جدھر طاقتور سامنے آتا ہے ادھر انصاف چلا جاتا ہے، پیغمبر اسلام نے 1500 سال قبل کہہ دیا تھا کہ ایسے نظام نہیں چل سکتے کہ جو چھوٹے چوروں کو جیل میں ڈالے اور بڑے ڈاکوؤں کو نہیں پکڑ سکے، جہاں قانونی کی حکمرانی نہیں ہوتی وہ ملک تباہ ہو جاتے ہیں۔

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کا کہنا ہے کہ لندن میں ہونے والا تماشہ اداروں کو مضبوط نہیں کرے گا۔ نواز شریف وہ آرمی چیف تعینات کرے گا جو اس کے خیال میں ان کی مدد کرے گا۔

وزیر اعظم شہباز شریف اور مسلم لیگ ن کے قائد نواز شریف پر تنقید کرتے ہوئے سابق وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ آج دنیا کو یہ پیغام جا رہا ہے کہ ملک کا سزا یافتہ شخص جس پر جے آئی ٹی بنی اور سزا ہوئی وہ قوم کے فیصلے کرنے جا رہا ہے، ملک میں ایک مفرور آدمی ملک کے اہم فیصلے کرنے جا رہا ہے۔

عمران خان نے الزام عائد کیا کہ مسلم لیگ ن کے قائد نواز شریف کو میرٹ کا مطلب ہی نہیں پتا، یا تو اسے رشتہ دار نظر آتے ہیں، یا ان لوگوں کو اوپر لاتا ہے جو ان کے فائدے میں ہیں،انہوں نے آئی جی عباس خان کی عدالت میں جمع کروائی گئی رپورٹ کا حوالے دیتے ہوئے الزام لگایا کہ شہباز شریف اور نواز شریف نے پیسے لے پولیس میں لوگوں کو بھرتی کیا، رپورٹ میں وہ کہتے ہیں کہ کئی ایسے لوگ بھرتی کئے گئے جو مجرم تھے، اگر پنجاب پولیس ٹھیک کام نہیں کر رہی تو اس کا ذمہ دار کون ہے؟

جوتے کی شکل کا گھر کرائے کیلئے خالی

پی ٹی آئی چیئرمین نے کہا کہ پاکستان کے اندر امر باالمروف نہیں ہے۔ اللہ کا حکم ہے کہ اچھائی کے ساتھ کھڑے ہو اور برائی کا ساتھ مت دیں۔ برطانیہ میں ترقی کی وجہ یہ ہے کہ وہاں لوگ اچھائی کا ساتھ دیتے ہیں،ہینڈلرز نے ان چوروں کو ہم پر مسلط کر دیا ہے۔ جنھوں نے پاکستان کی معیشت کا برا حال کر دیا، ترسیلات زر گر رہی ہیں، درآمدات کم ہو گئی ہے۔ انھوں نے ملک کو تباہی کی طرف دھکیل دیا ہے۔ ان کی کامیابی یہ ہے کہ 1100 ارب کی چوری سے اپنے مقدمات ختم کروا رہے ہیں۔

عمران خان نے کہا ملک میں اخلاقیات کا قتل ہوا ہے،قومیں ایٹم بم برداشت کر لیتی ہیں لیکن اگر اخلاقیات پر عمل نہ ہو تو قوم کبھی نہیں بنتی،میں اپنے پر حملے کی ایف آئی آر درج نہیں کروا سکتا کیونکہ یہاں قانونی کی حکمرانی نہیں ہے۔ جو کچھ اعظم سواتی کے ساتھ ہوا وہ قانونی کی بالادستی نہ ہونے کی وجہ سے ہے۔

پی ٹی آئی لانگ مارچ کے دوسرے مرحلے کے دوسرے روز گجرات کی حدود سے شروع ہونے والا مارچ رامتلی چوک سے ہوتا ہوا جی ٹی ایس چوک گجرات میں پہنچ کراختتام پذیر ہو گیا ہے، جس کی قیادت وائس چیرمین تحریک انصاف شاہ محمود قریشی اور دیگر قائدین نے کی۔ مرکزی قائدین میں سے شاہ محمود قریشی اور حماد اظہر نے بلٹ پروف شیشے والے ڈائس سے خطاب کیا۔

لانگ مارچ کا گجرات میں پہلا استقبال رامتلی چوک میں ق لیگ کے کارکنان نے کیا جبکہ دوسرا استقبال جی ٹی ایس چوک میں پی ٹی آئی کی مقامی قیادت اور کارکنان نے کیا جہاں سابق وزیر اعظم عمران کا ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب نشر کیا گیا۔

پولیس کی جانب سے سکیورٹی کی فول پروف انتظامات کئے گئے تھے۔ مارچ کے اختتام پر کارکنان گھروں کو چلے گئے اور کل (سنیچر) کو دوسرے مرحلے کے تیسرے روز لانگ مارچ کا آغاز لالہ موسیٰ سے کیا جائے گا۔

Related Articles

Back to top button