وزن گھٹانے کے سرزد ہونیوالی عام غلطیاں

وزن کم کرنے کیلئے مناسب ڈائیٹ پلان اور مفید ورزش کا انتخاب بڑی اہمیت کے حامل ہوتے ہیں، چھوٹی سی غلطی بھی آپ کی محنت پر پانی پھیر سکتی ہے، بعض اوقات وزن اس تیزی سے کم نہیں ہو رہا ہوتا جس تیزی سے ہونی چاہئے، کبھی کبھی آپ کو لگتا ہے کہ آپ سب کچھ ٹھیک کر رہے ہیں لیکن پھر بھی مطلوبہ نتائج نہیں مل رہے، وزن کم کرنے کی کوشش کے دوران لوگ 15 عام غلطیاں کرتے ہیں۔
درحقیقت وزن میں ایک دن کے دوران چار پونڈ تک کمی بیشی ہو سکتی ہے، لیکن یہ اس بات پر منحصر ہے کہ آپ نے کتنا کھایا اور کتنا پانی استعمال کیا۔ ٹیپ کے ساتھ کمر کی پیمائش کرنے اور اپنی ماہانہ تصاویر لینے سے پتہ چل سکتا ہے کہ اصل میں آپ کے اندر کی چربی پگھل رہی ہے، چاہے ترازو پر نمبر تبدیل ہو یا نہ۔
وزن میں کمی کیلئے کیلوریز کم کرنی پڑتی ہیں، اس کا مطلب ہے کہ آپ کو چاہئے کہ کیلوریز کم کھائیں اور ورزش زیادہ کریں، ایسی خوراک کا روزانہ استعمال جس میں ہزار سے کم کیلوریز ہوں، وہ پٹھوں کے نقصان کا باعث بن سکتی ہیں اور میٹابولزم کو نمایاں طور پر سست کر سکتی ہیں۔ وزن میں کمی کرتے ہوئے جسم کے پٹھے اور چربی لازمی طور پر کم ہوتی ہے اگر آپ کیلوریز کی مقدار کو محدود کرتے وقت بالکل ورزش نہیں کرتے تو آپ کے پٹھوں کی کمیت زیادہ ہونے اور میٹابولک کی شرح

اب گلے میں خراش کرونا کی نئی علامت ہو سکتی ہے

میں کمی ہو سکتی ہے۔ بہت زیادہ ورزش سے اپنے جسم کو زیادہ کیلوریز جلانے پر مجبور کرنے کی کوشش نہ تو موثر ہے اور نہ ہی صحت مند، کم ورزش کرنے سے پٹھوں اور میٹابولزم میں کمی ہو سکتی ہے، دوسری جانب بہت زیادہ ورزش نہ تو صحت مند ہے اور نہ ہی مؤثر اور اس سے شدید دباؤ پڑ سکتا ہے۔
وزن میں کمی کے دوران بھاری ورزش ناقابل یقین حد تک اہم ہے، مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ وزن اٹھانا پٹھے بنانے اور میٹابولک شرح بڑھانے کے لیے سب سے موثر ورزشوں میں سے ایک ہے، اس سے مجموعی طور پر جسم کی ساخت بھی بہتر بنتی ہے اور پیٹ کی چربی بھی تیزی سے کم ہوتی ہے، کم چکنائی والی خوراک یا ڈائٹ فوڈ کو اکثر وزن کم کرنے کیلئے اچھا انتخاب سمجھا جاتا ہے لیکن اصل میں ان کا اثر اس کے برعکس ہوتا ہے، چربی سے پاک ’غذا‘ یا غذاؤں میں عام طور پر چینی کی مقدار زیادہ ہوتی ہے اور اس سے بھوک اور کیلوریز کی مقدار بڑھ سکتی ہے۔
بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ ورزش ان کے میٹابولزم کو’سپر چارج‘ کرتی ہے اگرچہ ورزش میٹابولک کی شرح میں کچھ اضافہ کرتی ہے لیکن ہو سکتا ہے کہ یہ آپ کے خیال سے کم ہو، مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ لوگ ورزش کے دوران کم ہونے والی کیلوریز کی تعداد کا زیادہ تخمینہ لگاتے ہیں۔
اگر آپ وزن کم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں تو زیادہ پروٹین کھانا انتہائی ضروری ہے، پروٹین کئی طریقوں سے وزن کم کرنے میں مدد کرتے ہیں۔ان سے بھوک کم ہو سکتی ہے، پیٹ بھرنے کا احساس ہوتا ہے، مطالعے میں لوگوں نے ایسی غذا کھائی جس میں 30 فیصد کیلوریز پروٹین سے لی گئیں، نتیجتاً اس وقت کے مقابلے میں روزانہ اوسطاً 575 کم کیلوریز استعمال کیں جب وہ پروٹین سے 15 فیصد کیلوریز لیتے تھے۔
کم ریشوں والی غذا وزن کم کرنے کی آپ کی کوششوں کے لیے نقصان دہ ہو سکتی ہے۔ مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ ایک قسم کا حل پذیر ریشہ جو چپچپا ریشہ کہلاتا ہے، ایک جیلی بنا کر بھوک کو کم کرنے میں مدد کرتا ہے۔ یہ جیلی آپ کے ہاضمے کی نالی میں آہستہ آہستہ حرکت کرتی ہے جس سے آپ کو بھرے ہوئے پیٹ کا احساس ہوتا ہے۔
کیٹوجینک اور کم کاربوہائیڈریٹ والی غذا وزن میں کمی کے لیے بہت مؤثر ثابت ہوسکتی ہے، مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ اس سے بھوک کم ہوتی ہے جس کی وجہ سے اکثر کیلوریز کی مقدار میں خود بخود کم ہو جاتی ہے، اگرچہ کیٹوجینک اور کم کاربوہائیڈریٹ والی غذا بھوک اور کیلوریز کی مقدار کو کم کرنے میں مدد گار ہیں، بہت زیادہ چربی شامل کرنے سے وزن میں کمی کی رفتار رک یا سست ہو سکتی ہے۔
کئی سالوں سے روایتی مشورہ یہ رہا ہے کہ بھوک اور میٹابولزم میں کمی کو روکنے کے لیے ہر چند گھنٹے بعد کھانا کھایا جائے۔ اکثر کھاتے رہنے سے وزن کم کرنے کی آپ کی کوششوں کو نقصان پہنچ سکتا ہے، بہترین نتائج کے لیے صرف اس وقت کھانا ضروری ہے جب آپ بھوکے ہوں۔
غذائیت سے بھرپور غذائیں کھانا وزن کم کرنے کی ایک اچھی حکمت عملی ہے تاہم، ہوسکتا ہے آپ اب بھی ضرورت سے زیادہ کیلوریز استعمال کر رہے ہوں اگر آپ اپنے کھانے کا ریکارڈ نہیں رکھ رہے تو آپ احساس سے زیادہ کیلوریز استعمال کر رہے ہوں گے، ہو سکتا ہے کہ آپ کو پروٹین اور فائبر بھی اپنے خیال سے کم مل رہا ہو۔
بہت سے لوگ وزن کم کرنے کے لیے سافٹ ڈرنکس اور دیگر میٹھے مشروبات کو اپنی غذا سے نکال دیتے ہیں، جوکہ اچھی بات ہے تاہم، اس کی بجائے پھلوں کا رس پینا عقل مندی نہیں، اگر آپ چینی سے بنے میٹھے مشروبات استعمال نہیں کرتے لیکن پھلوں کا رس پیتے رہتے ہیں، تو آپ پھر بھی بہت زیادہ چینی استعمال کر رہے ہیں۔ مجموعی طور پر زیادہ کیلوریز کے استعمال کا امکان ہے، لیبل پر لکھی معلومات کو درست طور پر نہ پڑھنے سے ممکن ہے آپ غیر ضروری کیلوریز اور مضر صحت اجزا استعمال کریں، اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ لیبل کو اچھی طرح پڑھیں۔
وزن میں کمی کیلئے آپ جو بدترین چیزیں کر سکتے ہیں، ان میں سے ایک انتہائی پروسیسڈ غذائیں کھانا ہے، جانوروں اور انسانی مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ موٹاپے اور صحت کے دیگر مسائل کی موجودہ وبا میں پروسیسڈ غذائیں ایک بڑا عنصر ہو سکتی ہیں، کچھ محققین کا خیال ہے کہ اس کی وجہ آنتوں کی صحت اور سوزش پر ان کے منفی اثرات ہو سکتے ہیں، مکمل غذائیں کم ہوتی ہیں، اس کا مطلب ہے کہ ان کا زیادہ استعمال کرنا مشکل ہے، اس کے برعکس، پروسیسڈ فوڈز کا زیادہ استعمال بہت آسان ہے۔

Related Articles

Back to top button